ہوم » نیوز » عالمی منظر

موخذہ کی کارروائی : ڈونالڈ ٹرمپ کو بری کئے جانے کے بعد صدر جو بائیڈن نے کہا : جمہوریت نازک ہوتی ہے

US Capitol Hill Violence: مواخذہ کی کارروائی کو لے کر مسلسل چار دنوں تک سماعت ہوئی ۔ اس کے بعد پانچویں دن ووٹنگ ہوئی ۔ووٹنگ میں 57 سینیٹروں نے انہیں قصوروار پایا جبکہ 43 اراکین نے انہیں قصوروار نہیں پایا ۔ انہیں قصوروار قرار دینے کیلئے سینیٹ کو دوتہائی اکثریت یعنی 67 ووٹوں کی ضرورت تھی ۔

  • UNI
  • Last Updated: Feb 14, 2021 02:50 PM IST
  • Share this:
موخذہ کی کارروائی : ڈونالڈ ٹرمپ کو بری کئے جانے کے بعد صدر جو بائیڈن نے کہا : جمہوریت نازک ہوتی ہے
ڈونالڈ ٹرمپ کو بری کئے جانے کے بعد صدر جو بائیڈن نے کہا : جمہوریت نازک ہوتی ہے

امریکہ کے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی مواخذے سے بچ جانے کے بعد امریکی صدر جوزف بائیڈن نے اپنے رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ جمہوریت کمزور ہے۔ امریکی صدر جوبائیڈن نے ڈونلڈ ٹرمپ کی بریت کے بعد رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ٹرمپ کو سزا نہیں مل سکی مگر عائد کیا گیا الزام متنازع نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ امریکی پارلیمنٹ پر حملہ ہماری تاریخ کا افسوس ناک باب ہے، اس نے ہمیں یاد دلایا کہ جمہوریت کمزور ہے۔ امریکی صدر جوبائیڈن کا یہ بھی کہنا ہے کہ ہمیں ہمیشہ چوکنا رہنا چاہیئے اور جمہوریت کا ہمیشہ دفاع کیا جانا چاہیئے۔


خیال رہے کہ ڈونالڈ ٹرمپ 10 ووٹوں کے فرق سے مواخذہ سے بچ گئے ۔ ووٹنگ میں 57 سینیٹروں نے انہیں قصوروار پایا جبکہ 43 اراکین نے انہیں قصوروار نہیں پایا ۔ انہیں قصوروار قرار دینے کیلئے سینیٹ کو دوتہائی اکثریت یعنی 67 ووٹوں کی ضرورت تھی ۔ ٹرمپ پر الزامات عائد کئے گئے تھے کہ انہوں نے چھ جنوری کو امریکی پارلیمنٹ کیمپس میں دنگے کروائے تھے ۔ اس واقعہ میں پانچ لوگوں کی موت ہوگئی تھی ۔ ریپبلکن پارٹی کے سات لیڈروں نے ڈیموکریٹکس کا ساتھ دیا اور ٹرمپ کے خلاف ووٹنگ کی ۔


یہ دوسرا موقع تھا جب ٹرمپ کو کسی مواخذہ کی کارروائی کے دوران بری کردیا گیا ۔ ہفتہ کو سینیٹ کے فیصلے کو ٹرمپ کی جیت کے طور پر دیکھا جارہا ہے ۔ اس کے بعد اگر ٹرمپ چاہیں تو 2024 میں ایک مرتبہ پھر صدر کے عہدہ کیلئے الیکشن لڑسکتے ہیں ۔ تشدد بھڑکانے کے الزامات سے بری ہونے کے بعد ٹرمپ نے ایک بیان جاری کیا ۔ ٹرمپ نے الزام لگایا کہ انہیں بدنام کرنے کیلئے سازش رچی تھی ۔


بتادیں کہ مواخذہ کی کارروائی کو لے کر مسلسل چار دنوں تک سماعت ہوئی ۔ اس کے بعد پانچویں دن ووٹنگ ہوئی ۔ اس سے پہلے سماعت کے دوران ڈونالڈ ٹرمپ کے وکیلوں نے سینیٹ میں کہا کہ ریپبلکن لیڈر پر عائد الزامات سراسر جھوٹے ہیں اور ان کے خلاف مواخذہ کی کارروائی سیاست پر مبنی ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Feb 14, 2021 02:50 PM IST