ہوم » نیوز » عالمی منظر

ڈونالڈ ٹرمپ کا ایک بار پھر مسلم مخالف بیان

نيويارك۔ امریکی صدر کے عہدے کے لئے ریپبلکن پارٹی کے دعویدار ڈونالڈ ٹرمپ نے ایک بار پھر مسلم مخالف بیان دے کر صدارتی انتخابات سے پہلے زبانی جنگ تیز کر دی ہے۔

  • IBN Khabar
  • Last Updated: Jan 05, 2016 12:40 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
ڈونالڈ ٹرمپ کا ایک بار پھر مسلم مخالف بیان
نيويارك۔ امریکی صدر کے عہدے کے لئے ریپبلکن پارٹی کے دعویدار ڈونالڈ ٹرمپ نے ایک بار پھر مسلم مخالف بیان دے کر صدارتی انتخابات سے پہلے زبانی جنگ تیز کر دی ہے۔

نيويارك۔  امریکی صدر کے عہدے کے لئے ریپبلکن پارٹی کے دعویدار ڈونالڈ ٹرمپ نے ایک بار پھر مسلم مخالف بیان دے کر صدارتی انتخابات سے پہلے زبانی جنگ تیز کر دی ہے۔ مسٹر ٹرمپ نے ایک بار پھر نہ صرف مسلم مخالف بیان دیا ہے بلکہ انهوں نے دہشت گرد تنظیم اسلامک اسٹیٹ (آئی ایس) کے پنپنے کے لئے صدر براک اوباما اور سابق وزیر خارجہ ہلیری كلٹن کو بھی مورد الزام ٹھہرایا ہے۔


ٹرمپ کا کہنا ہے کہ وہ اپنے پچھلے بیان پر قائم ہیں اور اگر وہ صدر بنتے ہیں تو امریکہ میں مسلمانوں کے داخلے پر پابندی لگا دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ان کے اس بیان کی کئی لوگوں نے حمایت کی ہے۔ ریپبلکن پارٹی کے دعویدار ٹرمپ نے کہا،’’لوگوں نے میرے بیان کی حمایت کی اور اس مسئلہ کو اٹھانے کے لئے مبارک باد دی جسے لوگ مسترد کر رہے ہیں۔ میرا بیان بالکل صحیح تھا اور میں صدر بن گیا تو امریکہ میں مسلمانوں کا داخلہ بند کر دوں گا‘‘۔


اپنی انتخابی مہم کے بارے میں انہوں نے کہا کہ انتخابات سے پہلے ریڈیو اور ٹی وی اشتہارات پر کم از کم دو مليين امریکی ڈالر خرچ کرنے کا ان کا منصوبہ ہے۔ وہیں، لندن میں ٹرمپ کے مسلم مخالف بیان پر پابندی لگانے کے لئے ایک درخواست پر ایک ملین سے زائد دستخط کئے گئے ہیں۔

First published: Jan 05, 2016 12:40 PM IST