உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بلیو ٹک ویریفیکیشن کب ہوگا شروع؟ دوبارہ لانچ ہونے تک ایلون مسک کی یہ رہے گی پالیسی

    مسک نے ایک اور ٹویٹ میں لکھا ‘ووکس پاپولی، ووکس ڈی’ یہ ایک لاطینی جملہ ہے جس کا مطلب "لوگوں کی آواز خدا کی آواز" ہے۔

    مسک نے ایک اور ٹویٹ میں لکھا ‘ووکس پاپولی، ووکس ڈی’ یہ ایک لاطینی جملہ ہے جس کا مطلب "لوگوں کی آواز خدا کی آواز" ہے۔

    مسک نے منگل کو ٹویٹ کیا کہ بلیو ٹک ویریفیکیشن کے دوبارہ لانچ کو روک دیا گیا ہے جب تک کہ نقالی کو روکنے کا زیادہ با اعتماد طریقہ اپنایا نہ جائے۔ ہم ممکنہ طور پر افراد کے مقابلے میں تنظیموں کے لئے مختلف رنگوں کی جانچ کا استعمال کریں گے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • USA
    • Share this:
      ایلون مسک نے ایک تازہ اعلان میں کہا ہے کہ ٹوئٹر پر بلیو ٹک ویریفیکیشن بیج کا دوبارہ لانچ عارضی طور پر روک دیا جائے گا۔ یہ گزشتہ ماہ سوشل میڈیا پلیٹ فارم سنبھالنے کے بعد سے سب سے زیادہ متنازعہ فیصلوں میں سے ایک رہا ہے۔ اس نئے فیچر کے متعارف ہونے کے بعد متعدد پیروڈی اکاؤنٹس منظر عام پر آئے تھے، جس سے میمز اور تنقیدوں کا آغاز ہوا۔

      مسک نے منگل کو ٹویٹ کیا کہ بلیو ٹک ویریفیکیشن کے دوبارہ لانچ کو روک دیا گیا ہے جب تک کہ نقالی کو روکنے کا زیادہ با اعتماد طریقہ اپنایا نہ جائے۔ ہم ممکنہ طور پر افراد کے مقابلے میں تنظیموں کے لئے مختلف رنگوں کی جانچ کا استعمال کریں گے۔ یہ اس وقت سامنے آیا ہے جب دنیا کے امیر ترین شخص کی طرف سے امریکہ کے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو واپس لانے کے فیصلے پر سوالات اٹھ رہے ہیں۔ جن پر 2021 کیپیٹل ہل فسادات کے بعد پابندی عائد کردی گئی تھی۔

      سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر چھانٹیوں اور بڑے پیمانے پر اخراج کے ساتھ بہت سے مبصرین نے مسک کی ناقص قیادت کو بڑی ناکامی قرار دیا ہے۔ 44 بلین ڈالر کے معاہدے میں پلیٹ فارم حاصل کرنے کا ان کا اقدام اس سال کے شروع میں سامنے آنے کے بعد سے سرخیوں میں ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      واضح رہے کہ ایلون مسک (Elon Musk) ان دنوں مسلسل خبروں میں ہیں۔ ٹویٹر ہیڈ کوارٹر میں تمام افراتفری اور سوشل میڈیا پلیٹ فارم کی غیر متعین عمل درآمد کی وجہ سے خود ٹوئٹر پر رپ ٹوئٹر (RIP Twitter) کا ہیش ٹیگ چل رہا ہے۔ مسک ہر وقت سرخیوں میں رہتے ہیں۔ مسک کی جانب سے الٹی میٹم جاری کرنے کے چند گھنٹے بعد رپ ٹویٹر سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر ٹرینڈ ہونے لگا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: