اپنا ضلع منتخب کریں۔

    ٹوئٹر کے آدھے ملازمین کو نکالیں گے ایلون مسک، ورک فرام ہوم کی سہولت بھی بند کرنے کی تیاری

    ٹوئٹر کے آدھے ملازمین کو نکالیں گے ایلون مسک، ورک فرام ہوم کی سہولت بھی بند کرنے کی تیاری

    ٹوئٹر کے آدھے ملازمین کو نکالیں گے ایلون مسک، ورک فرام ہوم کی سہولت بھی بند کرنے کی تیاری

    ایلون مسک نے ٹوئٹر کو 44 بلین امریکی ڈالر میں خریدا ہے اور سودے کے بعد بلو ٹک ویریفکیشن کے لیے 8ڈالر یعنی قریب 660 روپے فی ماہ کی رقم مقرر کی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • international, IndiaNewyork
    • Share this:
      دنیا کے سب سے امیر آدمی ایلون مسک نے ٹوئٹر حصولیابی کے فوری بعد سی ای او پراگ اگروال سمیت تین بڑے عہدیداروں کو برخاست کردیا۔ اب اس کمپنی کے آدھے ملازمین کی نوکریوں پر تلوار لٹکی ہے۔ امریکی میڈیا ہاوس بلومبرگ کی رپورٹ کے مطابق، وہ آج چار نومبر کو 3700 ٹوئٹر ملازمین کو باہر کا راستہ دکھا سکتے ہیں۔

      یہ کمپنی کے مجموعی 7500 ملازمین کا تقریباً 50 فیصدی ہے۔ کمپنی میں بڑے پیمانے پر برخاستگی کا یہ دعویٰ بلومبرگ نے ایک انجام ذرائع کے حوالے سے کیا ہے۔ اس دعوے کی آفیشلی تصدیق فی الحال ٹوئٹر نے نہیں کی ہے۔ کمپنی کی ملکیت پانے کے بعد پہلے بڑے پالیسی میں تبدیلی کے طور پر مسک ہر بلو ٹک والے اکاونٹ ہولڈر سے چارجس وصول کرنے والے ہیں۔

      کہیں سے بھی کام کرنے کی آزادی پر روک
      ٹوئٹر دنیا میں اپنے ورک کلچر کی وجہ سے بھی جانی جاتی تھی۔ اس میں مپنی کی کہیں سے بھی کام کرنے کی آزادی کی پالیسی کا اہم رول رہا ہے۔ مسک کہیں سے بھی کام کرنے کی پالیسی کو ختم کرنے کا منصوبہ بنا رہے ہیں۔ ٹوئٹر نے کورونا کے دوران کئی لوگوں کو ہمیشہ کے لیے گھر سے کام کرنے کی آزادی بھی دے دی تھی۔ اس پالیسی میں تبدیلی آسکتی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      کیا ٹوئٹر کی نئی پالیسیاں ہندوستان میں آئی ٹی رولز کے شرائط کو کرے گی پوری؟ جانیے تفصیلات

      یہ بھی پڑھیں:
      مسک نے کہا-ٹوئٹر دلچسپ پلیٹ فارم، یہاں وہ ملتا ہے جس کے لیے آپ ادائیگی کرتے ہو

      بلو ٹک کے لیے ادا کرنے ہوں گے 8 ڈالر
      ایلون مسک نے ٹوئٹر کو 44 بلین امریکی ڈالر میں خریدا ہے اور سودے کے بعد بلو ٹک ویریفکیشن کے لیے 8ڈالر یعنی قریب 660 روپے فی ماہ کی رقم مقرر کی ہے۔ ایلون مسک نے بدھ کو اپنے ایک ٹوئٹ میں کہا کہ ٹوئٹر انٹرنیٹ پر سب سے دلچسپ جگہ ہے، اس لیے ااپ ابھی اس ٹوئٹ کو پڑھ رہے ہیں۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: