خواتین حجاب پہنیں یا نہیں، نوکری دینے والا ہی طے کرے گا: يوروپين کورٹ

نئی دہلی۔ يوروپی یونین کی سب سے بڑی عدالت يوروپين کورٹ آف جسٹس (ای سی جے) نے ایک بڑا فیصلہ سناتے ہوئے منگل کو کہا کہ نوکری دینے والی کمپنی کے پاس یہ حق محفوظ ہے کہ وہ اپنے یہاں نوکری کرنے والی خواتین کو حجاب پہننے دیتی ہے یا نہیں۔

Mar 14, 2017 08:39 PM IST | Updated on: Mar 14, 2017 08:39 PM IST
خواتین حجاب پہنیں یا نہیں، نوکری دینے والا ہی طے کرے گا: يوروپين کورٹ

گیٹی امیجیز

نئی دہلی۔ يوروپی یونین کی سب سے بڑی عدالت يوروپين کورٹ آف جسٹس (ای سی جے) نے ایک بڑا فیصلہ سناتے ہوئے منگل کو کہا کہ نوکری دینے والی کمپنی کے پاس یہ حق محفوظ ہے کہ وہ اپنے یہاں نوکری کرنے والی خواتین کو حجاب پہننے دیتی ہے یا نہیں۔ بتا دیں کہ حجاب کو لے کر زیادہ تر یوروپی ممالک میں بحث چھڑی ہوئی ہے اور اسلامی تنظیمیں حجاب پہننے کو مذہبی آزادی کا مسئلہ بتا رہی ہیں۔

کیا کہا کورٹ نے

Loading...

ای سی جے نے کام کی جگہوں پر مذہبی عقائد سے جڑے کپڑے پہننے یا ایسا ہی کوئی سمبل لے کر آفس آنے-جانے پر اپنے حکم میں واضح کہا کہ اگر کوئی آفس کسی سیاسی، مذہبی یا دیگر عقائد سے منسلک عوامی نمائش پر پابندی عائد کرتا ہے تو اسے امتیازی سلوک نہیں مانا جائے گا۔ عدالت فرانس اور بیلجیم کی رہنے والی دو خواتین سے منسلک ایک پٹيشن پر سماعت کر رہی تھی۔ ان دونوں ہی خواتین نے بغیر حجاب کے آفس آنے سے صاف انکار کر دیا تھا۔ کورٹ نے حجاب کے بارے میں بھی واضح کہا کہ اگر کوئی کمپنی اپنے ملازموں کو اسے پہن کر آنے سے انکار کر رہی ہے تو اسے امتیازی سلوک نہیں کہا جا سکتا۔

Loading...