اپنا ضلع منتخب کریں۔

    افغانستان کے صوبہ بلخ میں دھماکہ، کم از کم پانچ افراد ہلاک، آخر کون ہے ذمہ دار؟

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    شمالی صوبہ بلخ کے پولیس ترجمان محمد آصف وزیری (Mohammad Asif Wazeri) نے بتایا کہ آج صبح تقریباً 7 بجے کے قریب بلخ میں ایک بس میں دھماکا ہوا، جس کا تعلق ہیراتان آئل کے ملازمین سے ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ دھماکے میں کم از کم چار افراد زخمی بھی ہوئے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Afghanistan
    • Share this:
      پولیس نے منگل کو بتایا کہ شمالی افغانستان میں ایک آئل کمپنی کے ملازمین کو لے جانے والی گاڑی سے دھماکے کے نتیجے میں کم از کم پانچ افراد ہلاک ہو گئے۔ شمالی صوبہ بلخ کے پولیس ترجمان محمد آصف وزیری (Mohammad Asif Wazeri) نے بتایا کہ آج صبح تقریباً 7 بجے کے قریب بلخ میں ایک بس میں دھماکا ہوا، جس کا تعلق ہیراتان آئل کے ملازمین سے ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ دھماکے میں کم از کم چار افراد زخمی بھی ہوئے۔

      فوری طور پر یہ واضح نہیں ہو سکا کہ دھماکے کے پیچھے کس کا ہاتھ ہے۔ افغانستان میں حالیہ مہینوں میں شہری مراکز پر کئی حملے ہوئے ہیں، جن میں سے کچھ کی ذمہ داری اسلامک اسٹیٹ نے قبول کی ہے۔

      مزار شریف میں گاڑی کو نشانہ بنایا گیا:

      صوبائی پولیس کے ترجمان نے بتایا کہ شمالی افغانستان میں سڑک کنارے نصب بم پھٹنے سے ایک بس میں سوار پٹرولیم کمپنی کے سات ملازمین ہلاک ہو گئے۔ منگل کو مزار شریف میں بلخ کے محکمہ پولیس کے آصف وزیری نے کہا کہ بم سڑک کے کنارے ایک کارٹ میں رکھا گیا تھا۔ بس کے آتے ہی اس میں دھماکہ ہوا۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      اگرچہ طالبان نے گزشتہ سال اگست میں اقتدار میں واپس آنے کے بعد سے ملک بھر میں سیکورٹی کو بہتر بنانے کا دعویٰ کیا ہے، لیکن کئی بم دھماکے اور حملے ہوئے ہیں، جن میں سے اکثر کا دعویٰ داعش کے مقامی باب نے کیا ہے۔ اس ماہ کے شروع میں مزار شریف کے جنوب مشرق میں ایبک کے ایک مدرسے میں ہونے والے دھماکے میں کم از کم 19 افراد ہلاک اور 24 دیگر زخمی ہو گئے تھے۔

      وزیری نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ منگل کو ہونے والا دھماکہ شہر کے سید آباد اسکوائر کے قریب صبح 7:00 بجے کے قریب ہوا۔ انہوں نے کہا کہ دھماکے میں چھ افراد زخمی ہوئے ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: