உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

     ناکام ہوا آپریشن؟Pig Heart Transplant کروانے والے شہری کی موت، اس ملک کے شخص نے لگوایا تھا خنزیر کا دل

    First person to receive pig heart transplant dies after 2 months in America:  ساتھ ہی اس آپریشن سے پہلے ڈیوڈ نے کہا تھا کہ میرے پاس دو ہی آپشن ہیں۔ پہلا یہ کہ میں مرجاؤں یا دوسرا یہ کہ میں ٹرانسپلانٹ کے لیے تیار ہوجاؤں۔ آخر کار میں نے دوسرے آپشن کا انتخاب کیا اور ٹرانسپلانٹ کے لیے تیار ہو گیا۔

    First person to receive pig heart transplant dies after 2 months in America: ساتھ ہی اس آپریشن سے پہلے ڈیوڈ نے کہا تھا کہ میرے پاس دو ہی آپشن ہیں۔ پہلا یہ کہ میں مرجاؤں یا دوسرا یہ کہ میں ٹرانسپلانٹ کے لیے تیار ہوجاؤں۔ آخر کار میں نے دوسرے آپشن کا انتخاب کیا اور ٹرانسپلانٹ کے لیے تیار ہو گیا۔

    First person to receive pig heart transplant dies after 2 months in America: ساتھ ہی اس آپریشن سے پہلے ڈیوڈ نے کہا تھا کہ میرے پاس دو ہی آپشن ہیں۔ پہلا یہ کہ میں مرجاؤں یا دوسرا یہ کہ میں ٹرانسپلانٹ کے لیے تیار ہوجاؤں۔ آخر کار میں نے دوسرے آپشن کا انتخاب کیا اور ٹرانسپلانٹ کے لیے تیار ہو گیا۔

    • Share this:
      امریکہ(America) میں تقریباً دو ماہ قبل ایک بے مثال تجربے کے تحت پگ ہارٹ ٹرانسپلانٹ (Pig Heart Transplant) کرنے والے شخص کی موت ہو گئی ہے۔ میری لینڈ اسپتال، جس نے سرجری کی، بدھ کو یہ معلومات دی۔ ڈیوڈ بینیٹ (57) کی منگل کو یونیورسٹی آف میری لینڈ میڈیکل اسپتال (Maryland Hospital) میں انتقال ہوگیا۔ ڈاکٹروں نے ان کی موت کی وجہ نہیں بتائی ہے حالانکہ کہا ہے کہ ان کی حالت کئی روز قبل بگڑنا شروع ہو گئی تھی۔ بینیٹ کے بیٹے نے اس نئے تجربے کے لیے اسپتال کی تعریف کی اور کہا کہ خاندان کو امید ہے کہ اس سے اعضاء کی کمی پر قابو پانے کی کوششوں میں مدد ملے گی۔
      8 جنوری 2021 کو دنیا میں پہلی بار ڈاکٹروں نے امریکہ میں ایک انسان کی جان بچانے کی کوشش کی۔ میری لینڈ اسپتال کے ڈاکٹروں کا خیال تھا کہ اس کی جان بچانے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں تھا۔ سور کا دل انسانی جسم میں ٹرانسپلانٹ کرنے کے بعد میڈیکل سائنس میں نئی ​​امید پیدا ہوگئی۔ توقع کی جا رہی تھی کہ اس سے جانوروں کے اعضاء کو انسانی جسم میں ٹرانسپلانٹ کی جاری کوششوں میں کامیابی ملے گی۔

      ساتھ ہی اس آپریشن سے پہلے ڈیوڈ نے کہا تھا کہ میرے پاس دو ہی آپشن ہیں۔ پہلا یہ کہ میں مرجاؤں یا دوسرا یہ کہ میں ٹرانسپلانٹ کے لیے تیار ہوجاؤں۔ آخر کار میں نے دوسرے آپشن کا انتخاب کیا اور ٹرانسپلانٹ کے لیے تیار ہو گیا۔ رپورٹ کے مطابق ڈیوڈ بینیٹ نامی مریض میں کئی سنگین بیماریوں اور خراب صحت کے باعث انسانی دل کی پیوند کاری نہیں ہو سکی۔ تو سور کا دل لگا دیا گیا۔ ڈاکٹر اس بات پر نظر رکھے ہوئے تھے کہ سور کا دل ان کے جسم میں کیسے کام کر رہا ہے۔
      ایک شخص کو ڈاکٹر نے لگایا خنزیر کا دل، چونکا دینے والا سائنس کا کرشمہ آیا سامنے تو لوگ ہوئے دنگ
      میری لینڈ کے رہائشی ڈیوڈ بینیٹ گزشتہ کئی ماہ سے ہارٹ لنگ کی بائی پاس مشین کی مدد سے بستر پر پڑے ہیں۔ وہ کہتے ہیں، 'میرے پاس دو ہی راستے تھے، یا تو مروں یا پھر یہ ٹرانسپلانٹ کرواؤں۔ میں جینا چاہتا ہوں میں جانتا ہوں کہ یہ اندھیرے میں تیر چلانے کے مترادف ہے، لیکن یہ میرا آخری انتخاب ہے۔ انہوں نے کہا، 'میں صحت یاب ہونے کے بعد بستر سے اٹھنے کا منتظر ہوں۔'
      آپ کو بتاتے چلیں کہ نئے سال سے ایک دن قبل امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن (US Food and Drug Administration) نے روایتی ٹرانسپلانٹ کی عدم موجودگی میں آخری کوشش کے طور پر اس ایمرجنسی ٹرانسپلانٹ کی منظوری دی تھی۔ ڈاکٹر بارٹلے گریفتھ، جنہوں نے سرجری کے ذریعے خنزیر کا دل ٹرانسپلانٹ کیا، کہتے ہیں، 'یہ ایک کامیاب سرجری تھی۔ اس کے ساتھ ہم اعضاء کی کمی کے بحران کو حل کرنے کی طرف ایک قدم آگے بڑھ گئے ہیں۔
      کمرے میں لہو لہان ملے دیور۔بھابھی، شخص کے پرائیویٹ پارٹ سے نکل رہا تھا خون، جانیں کیا ہے معاملہ
      خنزیر کا ہی دل کیوں؟
      دراصل ایک طویل عرصے سے یہ خیال کیا جاتا تھا کہ سور کا دل انسانی دل کی ٹرانسپلانٹ کے لیے موزوںSuitable ہے۔ لیکن سور کے سیلس جس میں ایک شوگر سیل ہوتا تھا جسے الفا گل کہتے ہیں۔ اس کو انسانی جسم کے ذریعے خارج کئے جانے کا خطرہ تھا۔ ایسی صورت حال میں اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے سور کو جینیٹک طور پر تبدیل کیا گیا تاکہ وہ یہ خاص سیل کو پیدا نہ کرے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: