ہوم » نیوز » عالمی منظر

پاکستان کے سابق وزیراعظم نوازشریف کی حالت تشویشناک، پھراچانک کم ہوگئے پلیٹ لیٹس

جمعرات کوان کا پلیٹ لیٹس کاؤنٹ 35 ہزارسے بڑھ کر51 ہزارپہنچ گیا تھا، لیکن اگلے دن ہی جمعہ کواس میں پھرسےکمی دیکھی گئی۔

  • Share this:
پاکستان کے سابق وزیراعظم نوازشریف کی حالت تشویشناک، پھراچانک کم ہوگئے پلیٹ لیٹس
پاکستان کے سابق وزیراعظم نواز شریف۔ فائل فوٹو

نئی دہلی: پاکستان کےسابق وزیراعظم نوازشریف کی طبیعت پھربگڑگئی ہے۔ ان کے خون میں موجود پلیٹ لیٹس کی تعداد جمعہ کو پھرکم ہونا شروع ہوگیا۔ اس سے69 سال کے نواز شریف کی حالت سنگین بنی ہوئی ہے۔ اس سے قبل جمعرات کوان کا پلیٹ لیٹس کاؤنٹ 35 ہزارسے بڑھ کر51 ہزارپہنچ گیا تھا، لیکن اگلے دن ہی جمعہ کواس میں پھرسےکمی دیکھی گئی۔ یہ اطلاع ان کےذاتی ڈاکٹرعدنان خان نےہفتہ کودی ہے۔ٓ


وجوہات کی ہورہی ہے جانچ


ڈاکٹرعدنان خان کےمطابق، پاکستان کے سابق وزیراعظم نوازشریف کی حالت مسلسل سنگین بنی ہوئی ہے۔ ان کا علاج کررہےڈاکٹروں نےانہیں دی جارہی اسٹیرائڈ کاؤنٹ کم ہونےلگے۔ جیونیوزکےمطابق ڈاکٹرعدنان خان کا کہنا ہےکہ نوازشریف کے پلیٹ لیٹس کاؤنٹ اچانک کم ہونےکے پیچھے کی وجوہات کی جانچ کی جارہی ہے۔


پیرکی شب اسپتال میں کرایا گیا تھا داخل

واضح رہےکہ نوازشریف کوپاکستان کی بدعنوانی مخالف اکائی کی حراست سے پیرکی شب لاہورکےسروسیزاسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ اس وقت ان کے پلیٹ لیٹس کاؤنٹ سنگین طور پرکم ازکم ہوکر2000 پرپہنچ گئے تھے۔

آٹھ ہفتے کے لئے سزا معطل

اسلام آباد ہائی کورٹ نے بدعنوانی کےایک معاملے میں نوازشریف کی 7 سال کی سزا منگل کو8 ہفتے کےلئےمعطل کردی تھی، جس سے میڈیکل کی بنیاد پران کی رہائی کا راستہ صاف ہوگیا۔ انہیں چودھری شگرملس سے متعلق منی لانڈرنگ کےایک معاملے میں لاہورہائی کورٹ سے پہلے ہی ضمانت مل چکی ہے۔

حالت مستحکم کرنا پہلی ترجیح

نوازشریف کوبہترعلاج کےلئےلندن لےجانے سے متعلق پی ایم ایل - این کے جنرل سکریٹری احسان اقبال نےکہا کہ ڈاکٹروں کی پہلی اورسب سے اہم کوشش ان کی حالت کومستحکم کرنا ہے۔ احسان اقبال نےکہا، 'ایک بارجب ان کی حالت مستحکم ہوجائے گی توبیرون ممالک جانے کا سوال پیدا ہوگا اورپھرفیصلہ ہوگا'۔ ایک دیگرپی ایم ایل - این لیڈراورسابق وزیرخارجہ خواجہ آصف نےکہا کہ نوازشریف خود فیصلہ کریں گےکہ وہ بیرون ممالک میں علاج کرانا چاہتے ہیں یا نہیں۔
First published: Nov 02, 2019 06:34 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading