உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    100 روپئے لیٹر فروخت ہو رہا ہے آٹا... عمران خان یہ کیا بول گئے؟ ویڈیو ہوا وائرل

    100 روپئے لیٹر فروخت ہو رہا ہے آٹا... عمران خان یہ کیا بول گئے؟

    100 روپئے لیٹر فروخت ہو رہا ہے آٹا... عمران خان یہ کیا بول گئے؟

    Viral Video: مہنگائی سے متعلق کر رہے ایک تقریر میں عمران خان نے کہا کہ عام آدمی کو جس سے سب سے زیادہ تکلیف ہو رہی ہے، وہ ہے آٹا۔ آٹا دوگنا مہنگا ہوگیا ہے۔ ہمارے دور میں ایک کلو آٹا 50 روپئے کا تھا، آج وہ کراچی میں 100  روپئے لیٹر سے اوپر چلا گیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi, India
    • Share this:
      اسلام آباد: پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان ہمیشہ سرخیوں میں رہتے ہیں۔ وہ مسلسل اپوزیشن پر حملہ کرتے رہتے ہیں۔ عمران خان نے آگاہ کیا کہ ملک کی اقتصادی حالت تیزی سے خراب ہو رہی ہے اور ایسی سطح پر پہنچ سکتی ہے، جہاں سے لوٹنا ممکن نہیں ہوگا۔ ویڈیو خطاب کے دوران ان کی زبان پھسل گئی۔ انہوں نے کہا کہ اب ایک کلو آٹا 100 روپئے لیٹر سے زیادہ ہوگیا ہے۔ اب ان کا یہ ویڈیو وائرل ہو رہا ہے۔ لوگ انہیں ٹرول کر رہے ہیں۔

      مہنگائی سے متعلق کر رہے ایک تقریر میں عمران خان نے کہا کہ عام آدمی کو جس سے سب سے زیادہ تکلیف ہو رہی ہے، وہ ہے آٹا۔ آٹا دوگنا مہنگا ہوگیا ہے۔ ہمارے دور میں ایک کلو آٹا 50 روپئے کا تھا، آج وہ کراچی میں 100  روپئے لیٹر سے اوپر چلا گیا ہے۔



      اس درمیان پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ نے وزیر اعظم شہباز شریف کی حکومت کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے دعویٰ کیا کہ گزشتہ پانچ ماہ کے دوران کی مدت اقتدار کافی مایوس کن رہی ہے۔ انہوں نے کہا، ’ملک کو خرابی میں جانے سے بچانے کے لئے جلد اور شفاف الیکشن کرانا ہی واحد راستہ ہے۔ اگر الیکشن نہیں ہوئے تو چیزیں قابو سے باہر ہوجائیں گی‘۔

      عمران خان نے کہا کہ سیاسی استحکام سے ہی معیشت کو مستحکم کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا، ’ہمیں ملک کو اس نازک حالات سے باہر نکالنا ہے… وہ (حکومت) تیزی سے ملک کو خرابی کی طرف دھکیل رہے ہیں‘۔ سابق وزیر اعظم موجودہ حکوتم کے ان الزامات پر ردع ظاہر کر رہے تھے کہ عمران خان کی قیادت والی گزشتہ حکومت نے ہی صورتحال خراب کی تھی۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ جب ان کی حکومت گرائی گئی، اس وقت معیشت کی صورتحال ٹھیک ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: