ہوم » نیوز » عالمی منظر

گوگل، فیس بک اور ٹوئٹر کا عمران خان کو انتباہ، قانون نہیں بدلا پاکستان سے سمیٹ لیں گے کاروبار

وزارت انفارمیشن ٹکنالوجی (آئی ٹی) (Ministry of Information Technology IT) کے ذریعے اعلان کئے گئے نئے قانون کے تحت سوشل میڈیا کمپنیوں اور انٹرنیٹ خدمات دینے والی کمہنیوں کو ہر وہ اطلاع دینی ہوگی جو جانچ ایجنسیاں طلب کریں گے۔

  • Share this:
گوگل، فیس بک اور ٹوئٹر کا عمران خان کو انتباہ، قانون نہیں بدلا  پاکستان سے سمیٹ لیں گے کاروبار
وزارت انفارمیشن ٹکنالوجی (آئی ٹی) (Ministry of Information Technology IT) کے ذریعے اعلان کئے گئے نئے قانون کے تحت سوشل میڈیا کمپنیوں اور انٹرنیٹ خدمات دینے والی کمہنیوں کو ہر وہ اطلاع دینی ہوگی جو جانچ ایجنسیاں طلب کریں گے۔

نئے ڈجیٹل قانون کے آنے سے پاکستان (Pakistan) میں ہنگامہ مچ گیا ہے۔ انٹرنیٹ اور ٹکنالوجی کی بڑی کمپنیوں نے پاکستان کو دھکمی دی ہے کہ اگر اس قانون میں تبدیلی نہیں کی جاتی ہے تو پھر انہیں پاکستان سے اپنا کاروبار سمیٹنے کیلئے مجبور ہونا پڑے گا۔ اس میں گوگل (Google)، فیس بک (Facebook) اور ٹوئٹر (Twitter) جیسی بڑی کمپنیاں شامل ہیں۔ بتادیں کہ پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان (pakistan pm imran khan) نے بدھ کو اعلان کیا کہ اب ان کے یہاں انٹرنیٹکے کنٹینٹ پر سینشر شپ لائی جائے گی۔ قانون کو توڑنے والی کمپنی کے خلاف جرمانہ عائد کیا جائے گا۔


یہ قوانین تشویشناک

سرکاری پالیسیوں کے معاملے میں عالمی انٹرنیٹ کپمنیوں کی قیادت کرنے والی تنظیم ایشیا انٹرنیت نے ایک بیان میں کہا کہ انٹرنیٹ کمپنیوں کو نشانہ بنانے والے نئے قانون شویشناک ہے۔ بتادیں کہ گوگل (Google)، فیس بک (Facebook) اور ٹوئٹر (Twitter) بھی اس گٹھ بندھن کا حصہ ہے۔ کمپنیوں نے یہ باتیں ایسے وقت میں کہیں ہیں جب صرف دو دن پہلے وزارت انفارمیشن ٹکنالوجی (آئی ٹی) (Ministry of Information Technology IT) نے اس بارے میں اعلان کیا۔


کیا ہے اس قانون میں یہاں جانیں
پاکستان کے اخبار ڈان کے مطابق وزارت انفارمیشن ٹکنالوجی (آئی ٹی) (Ministry of Information Technology IT) کے ذریعے اعلان کئے گئے نئے قانون کے تحت سوشل میڈیا کمپنیوں اور انٹرنیٹ خدمات دینے والی کمہنیوں کو ہر وہ اطلاع دینی ہوگی جو جانچ ایجنسیاں طلب کریں گے۔ ان جانکاریوں میں سبسکرائبر کی اطلاع، ٹریفک ڈیٹا اور یوزرس کے ڈیٹا جیسی حساس (Sensitive) جانکاریاں بھی شامل ہو سکتی ہیں۔ نئے قوانین کے تحت سوشل میڈیا کمپنیو یا انٹرنیٹ سروس دینے والوں کو اسلام کو پامال کرنے والے مواد، دہشت گردی کو بڑھاوا دینے، بھدی زبان، فحاشی یا کسی دوسرے مواد کو خطرے میں ڈالنے کیلئے 3.14 ملین ڈالر تک جرمانہ لگایا جائے گا۔
Published by: sana Naeem
First published: Nov 21, 2020 03:54 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading