உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان: حافظ سعید خود نہیں لڑے گا الیکشن، لیکن اتارے گا اپنے200 امیدوار

    ممبئی کے 26/11 دہشت گردانہ حملے کے ماسٹر مائنڈ حافظ سعید خود الیکشن نہیں لڑے گا۔ حالانکہ پاکستان میں 25 جولائی ک ہونے والے الیکشن میں اپنی پارٹی کے 200 امیدواروں کو میدان میں اتارے گا۔

    ممبئی کے 26/11 دہشت گردانہ حملے کے ماسٹر مائنڈ حافظ سعید خود الیکشن نہیں لڑے گا۔ حالانکہ پاکستان میں 25 جولائی ک ہونے والے الیکشن میں اپنی پارٹی کے 200 امیدواروں کو میدان میں اتارے گا۔

    ممبئی کے 26/11 دہشت گردانہ حملے کے ماسٹر مائنڈ حافظ سعید خود الیکشن نہیں لڑے گا۔ حالانکہ پاکستان میں 25 جولائی ک ہونے والے الیکشن میں اپنی پارٹی کے 200 امیدواروں کو میدان میں اتارے گا۔

    • Share this:
      ممبئی کے 26/11 دہشت گردانہ حملے کے ماسٹر مائنڈ حافظ سعید خود الیکشن نہیں لڑے گا۔ حالانکہ پاکستان میں 25 جولائی کوہونے والے الیکشن میں اپنی پارٹی کے 200 امیدواروں کو میدان میں اتارے گا۔

      لشکر طیبہ سے منسلک تنظیم جماعت الدعوۃ کی سیاسی پارٹی کا نام ملـی مسلم لیگ (ایم ایم ایل) ہے۔ حالانکہ ابھی تک یہ پارٹی پاکستان الیکشن کمیشن میں رجسٹرڈ نہیں ہے۔ اس لئے عام الیکشن میں جماعت الدعوۃ نے غیر فعال سیاسی جماعت اللہ اکبر تحریک (اے اے ٹی) سے لڑنے کا فیصلہ کیا ہے۔

      جماعت الدعوۃ نے پرچہ نامزدگی  الیکشن کمیشن سے لے لیا ہے اور امیدواروں کو میدان میں اتار رہا ہے۔ دراصل اس جماعت کی ملـی مسلم لیگ (ایم ایم ایل) کا سیاسی پارٹی کے طور پر رجسٹریشن ہونا ابھی باقی ہے۔ تنظیم کے ایک سینئر رکن نے اس کی اطلاع دی۔ جماعت الدعوۃ نے سال 2008 میں ممبئی حملے کو انجام دیا تھا۔ اس تنظیم نے ملی مسلم لیگ کے نام سے اپنی سیاسی پارٹی شروع کی تھی، لیکن پاکستان الیکشن کمیشن کے پاس یہ اب تک رجسٹرڈ نہیں ہوپایا ہے۔

      عام انتخابات قریب آنے کے ساتھ ہی تنظیم نے غیر فعال پارٹی "اللہ اکبر تحریک"کے ذریعہ الیکشن لڑنے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ پارٹی پاکستان الیکشن کمیشن میں پہلے سے ہی درج ہے۔ جماعت الدعوۃ کے ایک رکن نے بتایا "یہ ایک غیر فعال پارٹی ہے، جسے احسان نام کے شہری نے رجسٹرڈ کرایا تھا۔ اس طرح کی کئی پارٹیاں پاکستان الیکشن کمیشن سے رجسٹرڈ ہیں تاکہ مین اسٹریم کی کسی پارٹی کو اگر پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑے تو وہ ان کا سہارا لے سکیں۔ انہوں نے کہا کہ ایم ایم ایل کے صدر سیف اللہ خالد اسسے متعلق جلد ہی رسمی اعلان کریں گے۔

      واضح رہے کہ پاکستان میں موجودہ حکومت کی مدت 31 مئی کو مکمل ہوچکی ہے اور فی الحال سابق چیف جسٹس ناصرالملک کو کارگزار وزیر اعظم منتخب کیا گیا ہے۔ کارگزار حکومت ہی پاکستان میں انتخابات کرائے گی۔ پاکستان کے آئین میں حکومت کی مدت ختم ہونے کے 60 دن میں الیکشن کرانے ہوتے ہیں۔ خاص بات یہ ہے کہ پاکستان کی تاریخ میں ایسا مسلسل دوسری بار ہورہا ہے جبکہ کسی منتخب حکومت نے اپنا 5 سال کی مدت کار مکمل کی ہے۔

       
      First published: