ہوم » نیوز » عالمی منظر

لداخ میں سرحد پرکشیدگی، چین کے ٹینٹ اور فوجی گاڑیاں نظر آئیں، ہندوستانی فوج نے بڑھائی فوج کی تعیناتی

چینی فوج تیزی سے اپنے فوجیوں کی تعداد بڑھا رہی ہے۔ گزشتہ دو ہفتے سے چین نے ان علاقوں میں سو سے زیادہ ٹینٹ بنا ڈالے ہیں۔ اس بیچ حالات کی سنگینی کو دیکھتے ہوئے ہندوستان نے بھی اپنے فوجیوں کی تعیناتی یہاں بڑھا دی ہے۔

  • Share this:
لداخ میں سرحد پرکشیدگی، چین کے ٹینٹ اور فوجی گاڑیاں نظر آئیں، ہندوستانی فوج نے بڑھائی فوج کی تعیناتی
لداخ میں سرحد پرکشیدگی، چین کے ٹینٹ اور فوجی گاڑیاں نظر آئیں

نئی دہلی: ہندوستان اور چین کے درمیان سرحد پر کشیدگی مسلسل بڑھتی جارہی ہے۔ لداخ میں اصل کنٹرول لائن (LAC) کے پاس پینگوگ سو جھیل اور گلوان وادی میں چینی فوج تیزی سے اپنے فوجیوں کی تعداد بڑھا رہی ہے۔ گزشتہ دو ہفتے سے چین نے ان علاقوں میں سو سے زیادہ ٹینٹ بنا ڈالے ہیں۔ اس بیچ حالات کی سنگینی کو دیکھتے ہوئے ہندوستان نے بھی اپنے فوجیوں کی تعیناتی یہاں بڑھا دی ہے۔


ہندوستانی فوج تیار


انگریزی اخبار ’دی ٹائمس آف ابڈئا’ نے دعویٰ کیا ہے کہ لداخ میں ہندوستانی فوج کچھ اضافی بٹالین کو سرحد پر بھیج رہی ہے۔ لیہہ فوج کی دوسری یونٹ میں تقریباً 12-10 ہزار فوجی ہیں۔ معاملے کی سنگینی کا اندازہ اسی بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ دو دن پہلے فوجی سربراہ منوج مکند نروے حالات کا جائزہ لینے کے لئے لداخ گئے تھے۔ ان کے ساتھ بارڈر پر شمالی کمانڈ کے چیف لیفٹیننٹ جنرل وائکے جوشی بھی موجود تھے۔ اس کے علاوہ ان دونوں کے  ساتھ حالات کا جائزہ لینے کے لئے لیہہ کے 14 کاپرس کمانڈر لیفٹیننٹ ہریندر سنگھ بھی تھے۔




سیٹلائٹ تصویروں میں دعویٰ

اس درمیان گلوان وادی کی کچھ سیٹلائٹ تصویریں سامنے آئی ہیں۔ اس تصویر کو آسٹریلین اسٹریٹجک پالیسی انسٹی ٹیوٹ سے منسلک ایک ایکسپرٹ نے شیئر کیا ہے۔ انہوں نے اس کے ذریعہ دعویٰ کیا ہے کہ اصل کنٹرول لائن (LAC) کے پاس دونوں طرف بہت سارے ٹینٹ دکھائی دے رہے ہیں۔ دعویٰ کیا جارہا ہے کہ گزشتہ دو ہفتے میں چین نے تقریباً 100 ٹینٹ بنائے ہیں۔ اس کے علاوہ دونوں طرف فوج کی گاڑیاں بھی ہیں۔ حالانکہ ہندوستان کی طرف سے ان تصویروں کی تصدیق نہیں کی گئی ہے۔

 



1962 جیسا ماحول

دعویٰ کیا جارہا ہے کہ گلوان وادی میں 1962 کی طرح ماحول نظر آرہا ہے، جب ہندوستان اور چین کے درمیان جنگ ہوا تھا۔ چین کے پیپلز لبیشن آرمی (PLA) کے 1200 جوان سرحد پر تعینات نظر آرہے ہیں۔ یہاں کئی کئی بنکر بھی دکھ رہے ہیں۔ ہندوستانیفوج ان سے 500 میٹر کی دوری پر کھڑی ہے۔ فوجی اہلکاروں نے کہا کہ پینگونگ سے جھیل اور گلوان وادی میں ہندوستانی فوج چینی فوج کے مقابلے میں کہیں زیادہ بہتر پوزیشن میں ہے۔
First published: May 24, 2020 12:44 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading