ہوم » نیوز » عالمی منظر

ہنگری نے دس ہزار لوگوں کو گرفتار کر ایمرجنسی نافذ کیا

بوڈاپیسٹ۔ ہنگری نے آج سربیا کی سرحد پار کر اپنے یہاں غیر قانونی طور پر داخل ہونے کی وجہ سے دس ہزار افراد کو گرفتار کرنے کے بعد پناہ گزین مسئلہ سے نمٹنے کے لئے ملک میں ایمرجنسی نافذ کر دیا ہے۔ یہ اطلاع پولیس نے دی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Sep 16, 2015 07:50 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
ہنگری نے دس ہزار لوگوں کو گرفتار کر ایمرجنسی نافذ کیا
بوڈاپیسٹ۔ ہنگری نے آج سربیا کی سرحد پار کر اپنے یہاں غیر قانونی طور پر داخل ہونے کی وجہ سے دس ہزار افراد کو گرفتار کرنے کے بعد پناہ گزین مسئلہ سے نمٹنے کے لئے ملک میں ایمرجنسی نافذ کر دیا ہے۔ یہ اطلاع پولیس نے دی ہے۔

بوڈاپیسٹ۔ ہنگری نے آج سربیا کی سرحد پار کر اپنے یہاں غیر قانونی طور پر داخل ہونے کی وجہ سے دس ہزار افراد کو گرفتار کرنے کے بعد پناہ گزین مسئلہ سے نمٹنے کے لئے ملک میں ایمرجنسی نافذ کر دیا ہے۔ یہ اطلاع پولیس نے دی ہے۔


پولیس کی خواتین ترجمان وکٹوریہ سراجر كوباكس نے بتایا کہ پولیس نے سربیا کی سرحد پار کر آئے 60 دیگر افراد کو حراست میں لے لیا ہے ۔ یہ افراد شام اور افغانستان سے آئے تھے۔

ہنگری کے وزیر اعظم وکٹر اورون نے کہا کہ سربیا سے ہنگری آنے والے پناہ گزینوں کویہاں پناہ دینے کی درخواست کو مسترد کر دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ پناہ گزین یہاں اپنے خلاف کارروائی کے خطرے کے ساتھ آ سکتے ہیں۔


سربیا نے کہا ہے کہ وہ سرحد پر پناہ گزینوں کی بڑھتی ہوئی تعدادکے پیش نظر ہنگری سے سرحد کھولنے کے سوال پر بات کر رہا ہے۔ یہ اطلاع سربیا پناہ گزین امور کے وزیر نے دی ہے۔


اس درمیان اقوام متحدہ پناہ گزین ہائی کمیشن کی خاتون ترجمان میلیسا فلیمنگ نے کہا ہے کہ سربیا سے متصل ہنگری سرحد بند ہونے سے پناہ گزین دوسری سمت جا سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں ہم دوسرے ممالک کے رابطے میں ہیں۔ پناہ گزینوں کے مسئلے کو دیکھتے ہوئے ایسا لگ رہا ہے کہ یہاں کی حالت میسی ڈونيا اور یونان جیسا ہو سکتا ہے۔

واضح رہے کہ سربیا کی سرحد سےہنگری میں رواں برس اب تک دو لاکھ پناہ گزین آ چکے ہیں۔

First published: Sep 16, 2015 07:49 AM IST