ہوم » نیوز » عالمی منظر

پاکستان: وزیراعظم بننے کے بعد عمران خان پر ہوگا کس کا کنٹرول؟

پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان پاکستان کے نئے وزیراعظم ہوں گے، لیکن ان کےسامنے بہت سے چیلنجزہوں گے، جس سے نمٹنا آسان نہیں ہوگا۔

  • Share this:
پاکستان: وزیراعظم بننے کے بعد عمران خان پر ہوگا کس کا کنٹرول؟
عمران خان ۔ فائل فوٹو

پاکستان میں الیکشن ختم ہونے کے 24 گھنٹے کے بعد سب سے بڑی پارٹی کے طورپرابھری پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے ملک کے عوام کو خطاب کیا، جس میں انہوں  نے کہا کہ وہ پاکستان میں ایسا گورننس لے کرآئیں گے جیسا پہلے کوئی بھی لے کرنہیں آیا۔


عمران خان نےعوام سے جووعدے کئے ہیں، وہ اس کو پورا کرسکیں گے یا پھر فوج کے قابو میں ہوں گے؟ ان کے سامنے کئی چیلنجزہوں گے۔ اس کے علاوہ پاکستانی فوج کے جنرل کا دبدبہ بھی رہتا ہے، جس کو کنٹرول کرنا عمران خان کے لئے ایک چیلنج ہے۔ ایک اوربڑا چیلنج آئی ایس آئی سے نمٹنا یا اسے ساتھ لے کرچلنے کا بھی ہوگا۔ اس طرح سے یہ دیکھنا ہوگا کہ ان پر کسی اورکا کنٹرول ہوگا یا پھروہ تمام فیصلوں کے لئے آزاد ہوں گے۔


پاکسان کے نئے وزیراعظم اپنے تمام وعدے مکمل کرپائیں گے یا نہیں، کیونکہ سب سے پہلے حالیہ انتخابات میں دوسری سیاسی پارٹیوں نے دھاندلی کا الزام عائد کیاہے اوراس انتخاب پر سوالیہ نشان لگ گیاہے۔ لیکن فوج کے سربراہ جنرل قمرباجوا اورآئی ایس آئی چیف نوید مختارہی کہیں نہ کہیں سیکورٹی، دفاع اوربیرون ممالک کے اہم موضوعات خاص طورپر ہندوستان اورافغانستان کے ساتھ رشتوں کو متاثر کرسکتے ہیں۔


عمران خان نے پاکستان کے عوام سے  وعدہ کیا کہ وہ جمہوری اداروں کو مضبوط کریں گے، غریبی ختم کریں گے اور پاکستان کوانویسٹمنٹ فرینڈلی بنائیں گے۔ بیرونی حکمت عملی کے موضوع پر انہوں نے کہا کہ وہ چاہتے ہیں کہ ہندوستان اور پاکستان ایک دوسری پرالزام تراشی کرنے کے بجائے اپنے مسائل کوڈپلومیٹک طریقے سے حل کریں۔

پاکستانی میڈیا نے بھی عمران خان کی کافی تعریف کی اور اسے "نئے پاکستان" کا آغازبتایا۔ سب سے بڑی پارٹی کےطورپرابھری پی ٹی آئی کو 109 سیٹیں حاصل ہوئی ہیں۔ وہیں شہباز شریف کی پاکستان مسلم لیگ کو63 سیٹیں ملی ہیں۔ تیسرے نمبر پرپاکستان پیپلزپارٹی رہی جسے 39 سیٹیں ملی ہیں۔

گزشتہ عام انتخابات میں عمران خان کی پارٹی تیسرے نمبرکی سب سے بڑی پارٹی تھی۔ حالانکہ اس بارسیاسی پنڈتوں کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی سب سے بڑی پارٹی کے طورپرابھرے گی اورنوازشریف کی پارٹی پی ایم ایل - این بہت ہی کم فرق سے دوسرے مقام پررہے گی، لیکن جیسے جیسے نتائج آنے لگے ویسے ویسے دونوں پارٹیوں کے درمیان فرق بڑھتا گیا۔

اس طرح سے عمران خان کو کامیابی مل گئی ہے اور وہ اب جلد ہی پاکستان کے وزیراعظم کے طور پر ذمہ داریاں سنبھالیں گے، لیکن یہ جو مسائل اور چیلنجز ہیں اس سے نمٹنا آسان نہیں ہوگا، اس لئے اس پران کو پہلے ہی اپنی حکمت عملی تیار کرنی ہوگی۔

 
First published: Jul 27, 2018 04:16 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading