ہوم » نیوز » عالمی منظر

پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کی چین کو یقین دہانی، بس حادثے کی مکمل جانچ کی جائے گی

پاکستان ریڈیو نے خبر دی ہے کہ عمران خان نے اس معاملے میں چینی وزیر اعظم لی کی چیانگ کے ساتھ ٹیلی فون پر گفتگو کی ہے اور انہیں یقین دہانی کرائی ہے کہ داسو بس حادثے کے معاملے کی مکمل تحقیقات کی جائیں گی۔

  • UNI
  • Last Updated: Jul 18, 2021 04:00 PM IST
  • Share this:
پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کی چین کو یقین دہانی، بس حادثے کی مکمل جانچ کی جائے گی
پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کی چین کو یقین دہانی، بس حادثے کے کی مکمل جانچ کی جائے گی





اسلام آباد: پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے چین کو یقین دہانی کرائی ہے کہ داسو بس حادثے کے معاملے کی مکمل تحقیقات کی جائے گی اور پاکستان کے لئے چینی شہریوں، کارکنوں، پروجیکٹوں اور چینی اداروں کی حفاظت اہم ہے۔ پاکستان ریڈیو نے خبر دی ہے کہ عمران خان نے اس معاملے میں چینی وزیر اعظم لی کی چیانگ کے ساتھ ٹیلی فون پر گفتگو کی ہے اور انہیں یقین دہانی کرائی ہے کہ داسو بس حادثے کے معاملے کی مکمل تحقیقات کی جائیں گی اور چینی شہریوں، کارکنوں، پروجیکٹوں اور چینی اداروں کی حفاظت پاکستان کے لئے اہم ہے۔




داسو بس حادثے میں نو چینی اور چار پاکستانی شہری اس وقت ہلاک ہوگئے جب وہ لوگ بدھ کے روز ایک بس میں 4300 میگا واٹ کی صلاحیت والے ایک پن بجلی پروجیکٹ کے کام کے سلسلے میں جارہے تھے۔
داسو بس حادثے میں نو چینی اور چار پاکستانی شہری اس وقت ہلاک ہوگئے جب وہ لوگ بدھ کے روز ایک بس میں 4300 میگا واٹ کی صلاحیت والے ایک پن بجلی پروجیکٹ کے کام کے سلسلے میں جارہے تھے۔

پاکستانی ریڈیو نے بتایا ’’عمران خان نے مسٹر کی کیانگ کو یقین دلایا کہ حادثے میں زخمی ہونے والے چینی شہریوں کو بہتر طبی سہولیات فراہم کی جائیں گی‘‘۔ واضح رہے کہ داسو بس حادثے میں نو چینی اور چار پاکستانی شہری اس وقت ہلاک ہوگئے جب وہ لوگ بدھ کے روز ایک بس میں 4300 میگا واٹ کی صلاحیت والے ایک پن بجلی پروجیکٹ کے کام کے سلسلے میں جارہے تھے اور بس بالائی کوہستان علاقہ میں ایک دھماکے کے بعد گہری کھائی میں گر گئی تھی۔اس میں چین کے نو اور پاکستان کے چار افراد کی موت اور 28 دیگر زخمی ہوئے۔
اس واقعے کے بارے میں پاکستانی وزارت خارجہ نے کہا تھا کہ تکنیکی وجوہات کی وجہ سے، گیس کا اخراج ہونے کے سبب یہ دھماکہ ہوا تھا اور اس کے بعد بس گہری کھائی میں گر گئی۔ لیکن چینی وزارت خارجہ کے ترجمان ژاؤ لیجن نے اسے بم دھماکے کا واقعہ قرار دیا تھا۔






Published by: Nisar Ahmad
First published: Jul 18, 2021 03:58 PM IST