ہوم » نیوز » عالمی منظر

کشمیر پر پاکستان کا ساتھ دینے والے ترکی۔ ملائیشیا کو اب ایسے سبق سکھائے گا ہندوستان

ایک میڈیا رپورٹ کے مطابق، مودی حکومت ملائیشیا اور ترکی سے درآمد کئے جانے والے سامانوں میں کٹوتی کرنے پر غور وخوض کر رہی ہے۔

  • Share this:
کشمیر پر پاکستان کا ساتھ دینے والے ترکی۔ ملائیشیا کو اب ایسے سبق سکھائے گا ہندوستان
ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان کے ساتھ وزیر اعظم نریندر مودی: فائل فوٹو

نئی دہلی۔ جموں وکشمیر معاملہ پر پاکستان کا ساتھ دینے کو لے کر ترکی اور ملائیشیا ہندوستان کے خلاف متحد ہو گئے ہیں۔ ایسے میں حکومت ہند دونوں ملکوں کو بڑا کاروباری جھٹکا دینے کی تیاری میں ہے۔ ایک میڈیا رپورٹ کے مطابق، مودی حکومت ملائیشیا اور ترکی سے درآمد کئے جانے والے سامانوں میں کٹوتی کرنے پر غور وخوض کر رہی ہے۔ اس کے ساتھ ہی دونوں ملکوں پر نئے درآمداتی محصول لگانے پر بھی غوروخوض کیا جا رہا ہے۔

بلومبرگ کی ایک رپورٹ کے مطابق، مودی حکومت ترکی اور ملائیشیا کے ساتھ درآمدات کو محدود کرنے کے لئے ٹیرف اور نان ٹیرف دونوں متبادل پر غور کر رہی ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ حکومت ہند ترکی اور ملائیشیا پر مشکل کوالٹی جانچ، پہلے سے لگے ٹیکس کے ساتھ ہی اضافی طور پر ایک اور سیف گارڈ ٹیکس بھی لگا سکتی ہے۔ حالانکہ، ابھی ان پر کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے، لیکن ظاہر طور پر ہندوستان کے اس قدم سے ترکی اور ملائیشیا کے معاشی نظام پر بڑا اثر پڑے گا۔

ترکی نے فلسطین سے کیا تھا کشمیر کا موازنہ

ویسے ترکی کشمیر معاملہ پر پہلے بھی پاکستان کا ساتھ دیتا آیا ہے لیکن اب وہ کھلے طور پر کشمیر پر بولنے لگا ہے۔ ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے حال ہی میں کشمیر کا موازنہ فلسطین سے کیا تھا۔ ملائیشیا کے وزیر اعظم نے کشمیر پر دیا تھا یہ بیان
پچھلے مہینے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں کشمیر معاملہ کو اٹھاتے ہوئے ملائیشیا کے وزیر اعظم مہاتیر محمد نے الزام لگایا تھا کہ ہندوستان نے جموں وکشمیر پر ’ جارحیت کر کے قبضہ‘ کیا ہے۔ انہوں نے کہا تھا کہ ہندوستان کو اس مسئلہ کے حل کے لئے پاکستان کے ساتھ کام کرنا چاہئے۔ کشمیر بیان پر پچھتاوا نہیں اس درمیان ملائیشیا کے وزیر اعظم مہاتیر محمد نے منگل کو کہا کہ وہ کشمیر پر اپنے بیان پر قائم ہیں۔ وہ اپنے دل کی بات بولتے ہیں اور اسے پلٹتے یا بدلتے نہیں ہیں۔
First published: Oct 23, 2019 09:50 AM IST