ہوم » نیوز » عالمی منظر

عالمی عدالت انصاف میں روہنگیا مسلمانوں کی بڑی جیت ، میانمار کو نسل کشی روکنے کا حکم

ہیگ کے تاریخی گریٹ ہال آف جسٹس میں تقریبا ایک گھنٹے تک ہوئی سماعت میں عالمی عدالت نے میانمار کو حکم دیا کہ وہ چار مہینے میں آئی سی جے کو رپورٹ دے کر بتائے کہ اس نے حکم پر عمل درآمد کرنے کیلئے کیا کیا ہے ۔

  • Share this:
عالمی عدالت انصاف میں روہنگیا مسلمانوں کی بڑی جیت ، میانمار کو نسل کشی روکنے کا حکم
بنگلہ دیش کے کاکس بازار میں کھانے کی قطار میں کھرے روہنگیا پناہ گزیں ۔ تصویر : رائٹرس ۔

روہنگیائی مسلمانوں کو انٹرنیشنل کورٹ آف جسٹس میں بڑی جیت ملی ہے ۔ آئی سی جے نے اپنے حکم میں کہا ہے کہ میانمار روہنگیاوں کے خلاف ہورہے مظالم کو روکنے کیلئے ہر ممکن قدم اٹھائے ۔ عالمی عدالت انصاف کی 17 رکنی بینچ کا یہ متفقہ فیصلہ جج عبدالقوی احمد یوسف نے پڑھ کر سنایا۔ فیصلے میں کہا گیا ہے کہ عدالت انصاف روہنگیا مسلمانوں کی مبینہ نسل کُشی کے خلاف میانمار پر لگائے جانے والے الزامات پر مبنی مقدمہ سننے کی مجاز ہے۔


ہیگ کے تاریخی گریٹ ہال آف جسٹس میں تقریبا ایک گھنٹے تک ہوئی سماعت میں عالمی عدالت نے میانمار کو حکم دیا کہ وہ چار مہینے میں آئی سی جے کو رپورٹ دے کر بتائے کہ اس نے حکم پر عمل درآمد کرنے کیلئے کیا کیا ہے اور اس کے بعد ہر چھ مہینے میں تازہ صورتحال سے واقف کرائے ۔ حقوق انسانی کے کارکنان نے بین الاقوامی عدالت کے اس فیصلہ کا خیر مقدم کیا ہے ۔


ہیومن رائٹس واچ کے ایسوسی ایٹ انٹرنیشنل جسٹس ڈائریکٹر پرم پریت سنگھ نے کہا کہ روہنگیاوں کی نسل کشی روکنے کیلئے میانمار کو قدم اٹھانے کیلئے آئی سی جے کا حکم دنیا کے سب سے زیادہ مظلوم لوگوں کے خلاف مزید مظالم روکنے کے معاملہ میں تاریخی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ متعلقہ حکومتوں اور اقوام متحدہ کو یہ یقینی بنانا چاہئے کہ نسل کشی کی سماعت آگے بڑھنے کے ساتھ ساتھ حکم پر عمل درآمد بھی ہو ۔


بین الاقوامی عدالت کا یہ حکم افریقی ملک گامبیا کی عرضی پر آیا ہے ، جس نے مسلم ممالک کی تنظیموں کی جانب سے عرضی دائر کی تھی اور میانمار پر روہنگیاوں کی نسل کشی کا الزام لگایا تھا ۔ گزشتہ ماہ معاملہ کی ہوئی کھلی سماعت میں میانمار پر روہنگیاوں کی نسلی کشی کرنے کا الزام لگانے والے وکیلوں نے متعدد اہم ثبوت پیش کئے تھے ۔ انہوں نے دعوی کیا تھا کہ میانمار کی فوج روہنگیاون کے قتل ، آبروریزی اور ان کو ختم کرنے کیلئے مہم چلا رہی ہے ۔
First published: Jan 23, 2020 09:01 PM IST