உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    معروف ایرانی فلمساز اور ہدایت کارعباس کیارستمی کا انتقال

    فوٹو: دی گارجین ڈاٹ کام

    فوٹو: دی گارجین ڈاٹ کام

    ممبئی۔ ایران کی سنیما کو دنیا میں مضبوط شناخت دلانے والے مشہور فلمساز اور ہدایت کارعباس کیارستمی چل بسے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      ممبئی۔  ایران کی سنیما کو دنیا میں مضبوط شناخت دلانے والے مشہور فلمساز اور ہدایت کارعباس کیارستمی چل بسے۔ وہ 76 برس کے تھے۔ ایران کی خبر رساں ایجنسیوں کے مطابق فرانس کے دارالحکومت پیرس میں زیر علاج 76 سالہ ایوارڈ یافتہ فلم ڈائریکٹر عباس کیارستمی انتقال کر گئے ہیں۔ عباس کیارستمی پیرس میں کینسر کے علاج کے لیے گئے ہوئے تھے۔


      مسٹر عباس 1979 میں ایران میں انقلاب کے بعد ایران ہی میں رہے اور انھوں نے 40 فلمیں اور دستاویزی فلمیں بنائیں۔ 1997 میں ان کو اپنی فلم ٹیسٹ آف چیری کے لیے کانز فلم فیسٹیول کا اعلی ترین ایوارڈ ’پالما ڈور‘ ملا۔ انھوں نے اپنی آخری دو فلمیں ایران سے باہر بنائیں۔ عباس ایران کے واحد فلم ڈائریکٹر تھے جن کو کانز میں پالما ڈور ایوارڈ ملا۔
      ان کی فلم ٹیسٹ آف چیری ایک ایسے شخص کی کہانی ہے جو ایسے شخص کو تلاش کر رہا ہے جو اس کو خودکشی کے بعد دفن کرے۔ اس فلم میں اس وقت ایرانی مذہبی رویوں کے بارے میں بات کی گئی ہے۔


      مسٹر عباس کی ایک اور فلم ’ٹین‘ بھی پام ڈی اور ایوارڈ کے لیے نامزد ہوئی تھی۔ یہ فلم ایک گاڑی میں دو ڈیجیٹل کیمرے نصب کر کے بنائی گئی تھی۔ اس فلم میں ایک خاتون تہران میں گاڑی چلاتے ہوئے مختلف مسافروں کے ساتھ بات چیت کرتی ہیں اور ایرانی معاشرے میں خواتین کے کردار کے بارے میں سماجی مسائل کو اجاگر کیا گیا۔ مسٹر عباس نے 2005 میں برطانوی ڈائریکٹر کین لوچ اور اطالوی ہدایتکار ارمانو اولمو کے ساتھ مل کر تین حصوں پر مشتمل فلم ٹکٹ بنائی۔


      ان کے انتقال پر نیو یارک کے سینما میگزین دا فلم سٹیج نے ٹوئٹ کیا کہ ’دنیا نے بہترین ہدایتکار کھو دیا ہے‘۔ برطانوی فلم انسٹیٹیوٹ نے ٹوئٹ میں کہا ہے کہ ان کو عباس کے انتقال پر بہت افسوس ہے۔ واضح رہے کہ عباس کیارستمی کی ہر فلم  کو سنیما کے میدان میں ایک نیا تجربہ خیال کیا جاتا تھا۔ فلموں کے ماہرین اور بین الاقوامی ناقدین تک ان کی ستائش پر مجبور ہوجاتے تھے۔

      First published: