ہوم » نیوز » عالمی منظر

اسرائیل نے غزہ کے گھروں اور طبی اداروں پرکیاحملہ، ہلاکتوں کی تعداد مسلسل اضافہ

یونیورسٹی کے ایک پروفیسر احمد الاستال نے فضائی حملے سے قبل خوف و ہراس کا ایک منظر بیان کیا ، جس میں مرد ، خواتین اور بچے عمارت سے باہر دوڑ رہے تھے۔

  • Share this:
اسرائیل نے غزہ کے گھروں اور طبی اداروں پرکیاحملہ، ہلاکتوں کی تعداد مسلسل اضافہ
فلسطینی طبی احکام نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ حملے میں مرنے اور زخمی ہونے والوں کی تعداد میں اضافہ ہوسکتا ہے۔ غزہ کی پٹی میں راحت و بچاؤ کے کام اب بھی جاری ہیں اور ملبے میں لوگوں کی تلاش کی جارہی ہے۔ (Photo:AP)

غزہ پر اسرائیلی بمباری کے 10 دن ختم کرنے کے بعد بھی بین الاقوامی مطالبات کے باوجود اب تک جنگ بندی کا کوئی پختہ نشان نہیں ملا ہے۔اسرائیلی فضائی حملوں میں غزہ بھر میں کم از کم چھ افراد ہلاک اور ایک بڑے بڑے خاندان کا گھر تباہ ہوگیا جس کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد کم از کم 219 ہوگئی ، جس میں 63 بچوں بھی شامل ہیں۔رہائشیوں نے اینٹوں ، کنکریٹ اور دیگر ملبے کے انباروں کا سروے کیا جو کسی زمانے میں آسٹل خاندان کے 40 افراد کا گھر تھا۔ان کا کہنا تھا کہ ایک انتباہی میزائل فضائی حملے سے پانچ منٹ قبل جنوبی قصبے خان یونس میں عمارت پر ٹکرایا، جس سے سب فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔


یونیورسٹی کے ایک پروفیسر احمد الاستال نے فضائی حملے سے قبل خوف و ہراس کا ایک منظر بیان کیا ، جس میں مرد ، خواتین اور بچے عمارت سے باہر دوڑ رہے تھے۔انہوں نے کہا کہ جب تباہ کن بمباری ہوئی، اس سے قبل ہی ہم سڑک پر آگئے تھے۔انہوں نے کہا کہ ’’تباہی کے سوا کچھ نہیں بچا ، بچوں کی چیخیں گلیوں میں ٹکرا رہی ہیں۔ یہ سب کھلے عام ہو رہا ہے اور ہماری مدد کرنے والا کوئی نہیں ہے۔ ہم خدا سے دعا گو ہیں کہ ہماری مدد کریں‘‘۔


غزہ کی وزارت صحت نے بتایا کہ خان یونس اور رفاہ حملوں میں ایک خاتون ہلاک اور آٹھ افراد زخمی ہوگئے۔


حماس کے زیرانتظام اقصیٰ ریڈیو نے بتایا کہ اس کا ایک رپورٹر غزہ میں ایک فضائی حملے میں مارا گیا۔ شیفا اسپتال کے ڈاکٹروں نے بتایا کہ ان کی پانچ لاشوں میں شامل ہیں جنھیں بدھ کے اوائل میں لایا گیا تھا۔ ان ہلاکتوں میں دو افراد شامل تھے جب ان کے اپارٹمنٹ میں انتباہی میزائل گرنے سے ہلاک ہوا تھا۔

18 سالہ محمود اشتیوی ، ذیتون کے پڑوس میں اسرائیلی چھاپے میں مارے گئے، جبکہ دوسری کم عمر لڑکی 3 سالہ امینہ تھی۔ اسرائیلی فضائی حملے میں اس کے والد ، ماں اور بہن کے بھی زخمی ہونے کے بعد ہلاک ہوگئی۔

اسرائیلی افواج نے مکانات، کھیتوں اور صحت کے مراکز کو نشانہ بنایا گیا۔چھاپوں میں غزہ میں پندرہ رہائشی عمارتیں اور ایک مسجد کو بھی تباہ کردیا گیا۔ان میں سے ایک چھ منزلہ رہائشی عمارت تھی ، جس میں ایک اور مسجد ، تعلیمی مرکز اور پانچ مکانات تھے۔دوسرے علاقوں میں بھی اسرائیلی بموں کا نشانہ تھا، جس میں کھیت شامل ہے۔فلسطینی وزارت صحت کے مطابق، مجموعی طور پر 1530 فلسطینی زخمی ہوئے ہیں۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: May 19, 2021 05:47 PM IST