اپنا ضلع منتخب کریں۔

    نئےسال کےپہلےہفتےمیں 9 فلسطینی اسرائیلی فوج کےہاتھوں ہلاک، سرعام فوج کی فائرنگ کی وارداد

    اسرائیلی فوج نے ابتدائی طور پر اقرار کیا تھا کہ اس نے ایک فلسطینی شخص کو ہلاک کیا

    اسرائیلی فوج نے ابتدائی طور پر اقرار کیا تھا کہ اس نے ایک فلسطینی شخص کو ہلاک کیا

    قصائی نے بتایا کہ فوجی آئے اور انہوں نے میرے چہرے پر کالی مرچ کا اسپرے چھڑکا اور مجھے گاڑی سے باہر نکالا۔ انہوں نے کہا کہ مجھے نہیں معلوم کہ اس کے بعد کیا ہوا۔ مجھے اپنے چچا سے معلوم ہوا کہ میرے والد کو قتل کر دیا گیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • philistine
    • Share this:
      مغربی کنارے کے شہر سلواد میں اس ہفتے ہلاک ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد نو ہو گئی ہے، یوں نئے سال کے پہلے ہفتے میں 9 فلسطینی اسرائیلی فوج کے ہاتھوں ہلاک ہوئے ہیں۔ جس میں سے ایک سر عام فوج کی فائرنگ کی وارداد بھی شامل ہے۔ فلسطینی سرکاری خبر رساں ایجنسی وفا کے مطابق عینی شاہدین نے بتایا کہ قصبے کے مغربی دروازے پر ایک عارضی چوکی پر تعینات اسرائیلی فوجیوں نے 45 سالہ احمد عبدالجلیل کاہلہ (Ahmed Abdel-Jalil Kahla) کو زبانی تکرار کے بعد گاڑی سے باہر نکلنے پر مجبور کرنے کے بعد قریب سے گولی مار دی۔

      فلسطینی وزارت صحت نے بتایا کہ کاہلہ کو گردن میں زندہ گولی لگی تھی اور اس کے فوراً بعد رام اللہ کے ہسپتال میں دم توڑ گیا۔ اسرائیلی فوج نے ابتدائی طور پر دعویٰ کیا تھا کہ اس نے ایک فلسطینی شخص کو ہلاک کیا جو اوفرا اسرائیلی بستی کے قریب چوکی کے قریب فوجیوں پر چاقو لہراتا تھا، جس نے اسے گولی مار دی۔

      اس نے بعد میں اپنا بیان تبدیل کرتے ہوئے کہا کہ ایک مشکوک گاڑی نے معمول کے معائنے کے لیے رکنے سے انکار کر دیا اور یہ کہ اس کی فورسز نے گاڑی میں موجود مشتبہ افراد میں سے ایک کو حراست میں لینے کے لیے فسادات کو منتشر کرنے کا طریقہ استعمال کیا۔ اسرائیلی فوج کے ترجمان نے کہا کہ فوجیوں نے کاہلہ کو اس وقت گولی مار دی جب اس نے فوجی کے ہتھیاروں میں سے ایک پر قبضہ کرنے کی کوشش کی۔


      عینی شاہدین نے بتایا کہ کاہلہ کا چاقو سے حملہ کرنے کا کوئی ارادہ نہیں تھا، انہوں نے مزید کہا کہ فوجیوں نے بھیڑ کی طرف ایک اسٹن گرینیڈ فائر کیا تھا، جو چوکی کی وجہ سے بن گیا تھا، اور ان میں سے ایک کاہلہ کی گاڑی کو لگا۔

      ایک موٹر سوار نے رائٹرز کو بتایا کہ کاہلا نے پھر فوجیوں پر چیخنا شروع کر دیا اور جب وہ اس کی گاڑی کے قریب پہنچے اور کالی مرچ کا اسپرے استعمال کیا تو وہ باہر نکلا، ان کے ساتھ جھگڑا ہوا اور اسے گولی مار دی گئی۔

      یہ بھی پڑھیں: 

      قصائی نے بتایا کہ فوجی آئے اور انہوں نے میرے چہرے پر کالی مرچ کا اسپرے چھڑکا اور مجھے گاڑی سے باہر نکالا۔ انہوں نے کہا کہ مجھے نہیں معلوم کہ اس کے بعد کیا ہوا۔ مجھے اپنے چچا سے معلوم ہوا کہ میرے والد کو قتل کر دیا گیا ہے۔

      عینی شاہدین نے اسرائیلی رپورٹس کی بھی تردید کی کہ یہ واقعہ ایک تصادم کے دوران پیش آیا جہاں فلسطینی فوجیوں پر پتھر پھینک رہے تھے، انہوں نے مزید کہا کہ کاہلہ اپنے 18 سالہ بیٹے قصائی کے ساتھ اپنے تعمیراتی کام پر جا رہا تھا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: