உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Israeli-UAE: اسرائیلی وزیراعظم و UAE کے ولی عہد کی مصر میں ملاقات، ایرانی جوہری معاہدہ پر بھی بات چیت

    اسرائیل کے وزیر اعظم نفتالی بینیٹ (Naftali Bennett)

    اسرائیل کے وزیر اعظم نفتالی بینیٹ (Naftali Bennett)

    مصر اور متحدہ عرب امارات دونوں نے گزشتہ برسوں میں روس کے ساتھ تعلقات کو بڑھایا ہے، حالانکہ دونوں نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے ووٹ میں شمولیت اختیار کی تھی جس میں اس سے ہمسایہ ملک یوکرین پر حملہ روکنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ مصری اور اسرائیلی حکام نے تصدیق کی ہے کہ اسرائیلی وزیر اعظم نفتالی بینیٹ صدر عبدالفتاح السیسی (Abdel Fattah el-Sissi) سے ملاقات کے لیے مصر میں ہیں۔

    • Share this:
      اسرائیل کے وزیر اعظم نفتالی بینیٹ (Naftali Bennett) اور کہ متحدہ عرب امارات کے ڈی فیکٹو لیڈر اور ابوظہبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید النہیان (Sheikh Mohammed bin Zayed Al Nahyan) پیر کے روز ملاقات کے لیے مصر میں تھے۔ حکام نے بتایا کہ ملاقات کے دوران یوکرین جنگ کے اثرات پر بات چیت بھی شامل ہے۔ اس سے قبل غیر اعلانیہ ملاقاتیں اس وقت ہوئیں جب اسرائیل متحارب روس اور یوکرین کے درمیان ثالثی کی کوشش کر رہا ہے۔

      مصر اور متحدہ عرب امارات دونوں نے گزشتہ برسوں میں روس کے ساتھ تعلقات کو بڑھایا ہے، حالانکہ دونوں نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے ووٹ میں شمولیت اختیار کی تھی جس میں اس سے ہمسایہ ملک یوکرین پر حملہ روکنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ مصری اور اسرائیلی حکام نے تصدیق کی ہے کہ اسرائیلی وزیر اعظم نفتالی بینیٹ صدر عبدالفتاح السیسی (Abdel Fattah el-Sissi) سے ملاقات کے لیے مصر میں ہیں۔

      مصری عہدیدار نے بتایا کہ تینوں رہنماوؤں نے علاقائی موضوعات پر بھی بات چیت کی۔ جس میں ایران جوہری مذاکرات کے سلسلے میں بھی بات ہوسکتا ہے۔ عالمی طاقتوں کے ساتھ تہران کے جوہری معاہدے کی بحالی کے لیے بات چیت جاری ہے۔ عہدیداروں نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس معاملے پر میڈیا کو بریف کرنے کے مجاز نہیں ہیں۔

      مزید پڑھیں: Danish Siddiqui: دانش صدیقی کے والدین لڑیں گے کیس، طالبان کو عدالت میں لے جائیں گے

      اماراتی سرکاری خبروں میں بتایا گیا ہے کہ متحدہ عرب امارات کے ڈی فیکٹو لیڈر اور ابوظہبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید النہیان (Sheikh Mohammed bin Zayed Al Nahyan) بحیرہ احمر کے تفریحی شہر شرم الشیخ پہنچے تھے اور السیسی نے اس کے ہوائی اڈے پر ان سے ملاقات کی۔ بیان میں بینیٹ کے دورے کا ذکر نہیں کیا گیا۔

      تقریباً چھ مہینوں میں یہ دوسری بار تھا جب بینیٹ اور السیسی نے بات چیت کے لیے ملاقات کی ہے، جو کہ گرمجوشی کے تعلقات کی علامت ہے۔ پچھلی بار بھی دونوں رہنما شرم الشیخ میں ایک ساتھ بیٹھے تھے۔

      مزید پڑھیں: Rohingya: میانمار روہنگیائی عوام کی نسل کشی کا مرتکب، امریکی وزیر خارجہ نے کیا اپنی تشوش کا اظہار

      ستمبر میں السیسی سے ملاقات کے لیے بینیٹ کا دورہ 2010 کے بعد کسی اسرائیلی وزیر اعظم کا پہلا سرکاری دورہ تھا، جب مصری صدر حسنی مبارک نے بینجمن نیتن یاہو، فلسطینی صدر محمود عباس اور اس وقت کی امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن کے ساتھ ایک سربراہی اجلاس کی میزبانی کی تھی۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: