اپنا ضلع منتخب کریں۔

    ’لمبی چلے گی یہ لڑائی، ہمیں خود کو مضبوط کرنے کی ضرورت‘امریکی صدر جوبائیڈن کا دنیا سے خطاب

    Youtube Video

    امریکی صدر نے کہا کہ 'گزشتہ 30 سالوں میں پوری دنیا میں مطلق العنان قوتیں دوبارہ زندہ ہو گئی ہیں۔ ان کی شناخت بہت آسان ہے۔ اس میں قانون کی حکمرانی کی توہین، جمہوری آزادی کی توہین، سچائی کی توہین شامل ہے۔

    • Share this:
      وارسا: امریکہ (America) کے صدر جو بائیڈن(Joe Biden) نے پولینڈ (Poland) کے دارالحکومت وارسا(Warsaw) سے دنیا سے خطاب کیا۔ انہوں نے اپنی تقریر کا آغاز 1979 میں پولینڈ میں پیدا ہونے والے پوپ جان پال دوم کے سوویت یونین کے نام ایک پیغام سے کیا۔ انہوں نے کہا، ’ڈرو مت۔‘ بائیڈن نے کہا، ’ہم آزادی کے لیے ایک عظیم جنگ لڑ رہے ہیں۔ یہ لڑائی جمہوریت اور آمریت کے درمیان ہے، آزادی اور جبر کے درمیان ہے۔ ہمیں اس لڑائی میں واضح وژن کی ضرورت ہے۔ یہ جنگ دنوں یا مہینوں میں نہیں جیتی جائے گی۔ ہمیں آگے کی طویل جنگ کے لیے خود کو مضبوط کرنے کی ضرورت ہے۔‘ جب انہوں نے وارسا میں ہجوم میں یوکرین کے لوگوں کا ذکر کیا تو تالیاں بج اٹھیں۔

      بائیڈن نے کہا، ’اب یوکرین اور اس کے عوام جمہوریت اور آزادی کی جدوجہد میں اپنی قوم کے دفاع کے لیے صف اول پر ہیں۔‘ عوام کی مزاحمت ایک طویل جنگ کو ظاہر کرتی ہے۔ یہ تمام آزاد لوگوں کو متحد کرتا ہے۔‘‘ انہوں نے کہا، ’’میرے پاس یوکرین کے لوگوں کے لیے ایک پیغام ہے، جو میں نے آج یوکرین کے وزیر خارجہ اور وزیر دفاع کو دیا۔ یہ پیغام ہے کہ ہم آپ کے ساتھ کھڑے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ روسی صدر ولادی میر پوتن جنگ کو صحیح ٹھہرانے کے لیے مسلسل جھوٹ بول رہے ہیں۔

      یہ بھی پڑھیں:
      یوکرین کی فوج کو طاقتور بنائے گاUK، بوریس جانسن نے میزائلیں دینے کا کیا اعلان

      دنیا سے جھوٹ بول رہے ہیں پوتن
      امریکی صدر نے کہا کہ 'گزشتہ 30 سالوں میں پوری دنیا میں مطلق العنان قوتیں دوبارہ زندہ ہو گئی ہیں۔ ان کی شناخت بہت آسان ہے۔ اس میں قانون کی حکمرانی کی توہین، جمہوری آزادی کی توہین، سچائی کی توہین شامل ہے۔‘‘ انہوں نے کہا، ’’آج روس نے جمہوریت کا گلا گھونٹ دیا ہے۔ پوتن کہہ رہے ہیں کہ وہ یوکرین کو نازیوں سے آزاد کرا رہے ہیں۔ یہ محض جھوٹ ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      Russia Ukraine War:جنگ کی بھینٹ چڑھے مشرق وسطیٰ کے کئی ممالک، مصر میں بڑھی بریڈ کی قیمتیں

      صدر ولادیمیر زیلینسکی جمہوری طریقے سے منتخب ہوئے۔ وہ یہودی ہے۔ ان کے خاندان کے افراد نازیوں کے ہاتھوں مارے گئے۔ اور پوٹن کے پاس یہ کہنے کی طاقت ہے کہ وہ جو کر رہے ہیں وہ ٹھیک ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: