உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    بڑی خبر: کرائسٹ چرچ فائرنگ کے ملزم کی تصویر دکھانے پرعائد پابندی ختم

    فوٹو: سوشل میڈیا

    فوٹو: سوشل میڈیا

    اس معاملے کی سماعت کے بعد جج كیمرون منڈیر نے کہا’’اس واقعہ کے ملزم کے چہرہ کو دکھانے پر عائد پابندی ہٹا لی گئی ہے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      نیوزی لینڈ کے ہائی کورٹ نے کرائسٹ چرچ کی مساجد میں فائرنگ کرنے والے ملزم کا چہرہ دکھانے سے متعلق میڈیا پر عائد پابندی ہٹا لی ہے۔

      اس معاملے کی سماعت کے بعد جج كیمرون منڈیر نے کہا’’اس واقعہ کے ملزم کے چہرہ کو دکھانے پر عائد پابندی ہٹا لی گئی ہے۔ کراؤن نے مشورہ دیا ہے کہ ملزم کے چہرے کو چھپانے کی ضرورت نہیں ہے۔ لہذا اس سلسلے میں جاری حکم اب کالعدم ہو گیا ہے۔ میڈیا کو اب 16 مارچ کو ضلع عدالت کے سامنے حاضری کے وقت ملزم کی لی گئی تصاویر کو استعمال کرنے کی اجازت ہے۔

      واضح ر ہے کہ 15 مارچ کو ہوئے اس واقعہ میں 51 افراد ہلاک ہو گئے تھے اور کئی افراد زخمی ہوئے ہیں۔ برنٹن ہیریسن ٹارنٹ نامی ملزم نے اس واردات کو انجام دیا تھا۔
      First published: