உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    امریکہ نے القاعدہ اور آئی ایس آئی ایس کا خاتمہ کیا، اب افغانستان سے نکلنے کا وقت: جوبائیڈن

    Taliban in Afghanistan: افغانستان سے اپنی افواج کو واپس بلانے کی امریکہ کی 31 اگست کے متعینہ وقت سے پہلے ہزاروں لوگوں کو ابھی نکالا جانا باقی ہے۔

    Taliban in Afghanistan: افغانستان سے اپنی افواج کو واپس بلانے کی امریکہ کی 31 اگست کے متعینہ وقت سے پہلے ہزاروں لوگوں کو ابھی نکالا جانا باقی ہے۔

    Taliban in Afghanistan: افغانستان سے اپنی افواج کو واپس بلانے کی امریکہ کی 31 اگست کے متعینہ وقت سے پہلے ہزاروں لوگوں کو ابھی نکالا جانا باقی ہے۔

    • Share this:

      واشنگٹن: امریکہ کے صدر جو بائیڈن نے جمعہ کے روز کہا کہ کابل ایئر پورٹ پوری طرح سے کنٹرول میں ہے اور وہاں سے شہریوں کو نکالنے کا کام مسلسل جاری ہے۔ افغانستان میں جاری بحران پر وہائٹ ہاوس میں ایک پریس کانفرنس کو خطاب کرتے ہوئے انہوں نے ایک بار پھر دہرایا کہ اس جنوب ایشیائی ملک سے نکلنے کا وقت آگیا ہے۔ انہوں نے کہا، ’امریکہ نے 20 سال افغانستان میں کام کیا۔ القاعدہ اور اسلامک اسٹیٹ کا خاتمہ کیا، اب یہاں سے نکلنے کا وقت ہے‘۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے بتایا کہ اب تک افغانستان سے 18 ہزار لوگوں کو نکالا جا چکا ہے، جبکہ راحت مہم کے لئے وہاں اب بھی 6000 امریکی فوجی موجود ہیں۔


      امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا، ’ہم جولائی سے اب تک 18,000 سے زیادہ لوگوں اور 14 اگست سے شروع ہوئے فوجی ایئرلفٹ مہم کے بعد تقریباً 13,000 لوگوں کو کابل سے نکال چکے ہیں‘۔ امریکی صدر نے افغانستان سے نکاسی مشن کو خطرناک بتاتے ہوئے کہا، ’اس میں مسلح اہلکاروں کے لئے کافی خطرہ ہے اور اسے مشکل حالات میں آپریٹ کیا جا رہا ہے۔ میں یہ وعدہ نہیں کرسکتا کہ آخری نتیجہ کیا ہوگا‘۔




       امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا، ’ہم جولائی سے اب تک 18,000 سے زیادہ لوگوں اور 14 اگست سے شروع ہوئے فوجی ایئرلفٹ مہم کے بعد تقریباً 13,000 لوگوں کو کابل سے نکال چکے ہیں‘۔ فائل فوٹو

      امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا، ’ہم جولائی سے اب تک 18,000 سے زیادہ لوگوں اور 14 اگست سے شروع ہوئے فوجی ایئرلفٹ مہم کے بعد تقریباً 13,000 لوگوں کو کابل سے نکال چکے ہیں‘۔ فائل فوٹو

       جو بائیڈن نے افغانستان میں پھنسے شہریوں کی ایئر لیفٹنگ کو تاریخ کو سب سے بڑے اور سب سے مشکل ایئر لفٹوں میں سے ایک بتایا۔ انہوں نے کہا، ’ہمارے پاس زمین پر تقریباً 6000 فوجی ہیں، جو رنوے کی حفاظت کرتے ہیں اور ہوائی اڈے کے آس پاس (کابل، افغانستان میں) ماونٹین ڈویژن کو کھڑے گارڈ اور شہری روانگی میں سمندری مدد فراہم کرتے ہیں‘۔ انہوں نے مزید کہا، ’ہم نے ہوائی اڈے (کابل میں) کو محفوظ کیا ہے، جس سے نہ صرف فوجی پروازیں، بلکہ دیگر ممالک کے شہری چارٹر کے ساتھ ہی شہریوں اور کمزور افغانیوں کو باہر نکالنے والے غیر سرکاری تنظیموں کی پروازیں بھی پھر سے شروع ہو رہی ہیں۔


      طالبان کے حملے سے افغانستان کی جیلوں میں بند اسلامک اسٹیٹ کے قیدیوں کے رہا ہونے پر جو بائیڈن نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا یہ مبینہ دہشت گرد بڑا خطرہ ثابت ہوں گے۔ افغانستان کی موجودہ صورتحال پر انہوں نے کہا کہ اس مشکل حالات میں بھی ناٹو کام میں مصروف ہے اور امریکہ نے برطانیہ اور فرانس جیسے دیگر معاون ممالک سے بھی بات کی ہے۔



       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: