உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کابل کےکلاس روم بم دھماکےمیں مرنےوالوں کی تعداد 53، طالبات اورخواتین بھی مہلوکین میں شامل

    تصویر زہرہ رحیمی

    تصویر زہرہ رحیمی

    افغانستان میں اقوام متحدہ کے امدادی مشن (UNAMA) کے مطابق ہزارہ کے پڑوس میں جمعے کو یونیورسٹی میں ہونے والے بم دھماکے میں ہلاکتوں کی تعداد میں مزید اضافے کا خدشہ ہے۔ اب تک 53 افراد ہلاک اور 110 زخمی ہوچکے ہیں جن میں نوعمر اور نوجوان خواتین سب سے زیادہ متاثر ہوئی ہیں۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, IndiaKabulKabulKabulKabul
    • Share this:
      افغانستان کے دارالحکومت کابل کے ایک شیعہ علاقے میں جمعہ 30 ستمبر کو ایک خودکش بمبار نے تعلیمی مرکز کو نشانہ بنایا۔ کابل کے کاج ایجوکیشنل سنٹر میں ہونے والے بم دھماکے میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 53 ہو گئی ہے۔ افغانستان میں اقوام متحدہ کے امدادی مشن (UNAMA) کے مطابق ہزارہ کے پڑوس میں جمعے کو یونیورسٹی میں ہونے والے بم دھماکے میں ہلاکتوں کی تعداد میں مزید اضافے کا خدشہ ہے۔

      یوناما نے ٹویٹ کیا کہ کابل کے ہزارہ کوارٹر میں جمعہ کے روز کلاس روم میں بم دھماکے سے ہلاکتوں میں مزید اضافہ ہو کر 53 ہلاک افراد ہوگئے ہیں۔ جن میں کم از کم 46 لڑکیاں اور نوجوان خواتین شامل ہیں۔ وہیں 110 سے زائد افراد زخمی ہوگئے ہیں۔ ہماری انسانی حقوق کی ٹیم اس سلسلے میں سخت تشویش کا اظہار کرتی ہے۔

      اس سے قبل طالبان کے ترجمان عبدالنفی تکور نے طلوع نیوز کے ذریعہ اطلاع دی تھی کہ یہ دھماکہ جمعے کو کابل کے 13 ویں سیکورٹی والے علاقے میں ہوا۔ افغانستان کی اقلیتی ہزارہ نسل سے تعلق رکھنے والی خواتین کے ایک گروپ نے ہفتہ یکم اکتوبر کو کابل کے کاج ایجوکیشنل سنٹر پر دہشت گردانہ حملے کی مذمت کی۔ یہ دھماکہ کابل کے وزیر اکبر خان محلے کے قریب ہونے والے دھماکے کے چند دن بعد ہوا ہے جس نے عالمی سطح پر ہنگامہ برپا کر دیا تھا۔ کابل میں روسی سفارت خانے کے باہر ہونے والے تازہ دھماکے کی بھی شدید مذمت کی گئی۔

      دھماکوں کا یہ سلسلہ ایسے وقت میں شروع ہوا ہے جب طالبان نے گزشتہ سال امریکی حمایت یافتہ سویلین حکومت کا تختہ الٹنے کے بعد افغانستان میں اقتدار میں ایک سال مکمل کر لیا تھا۔ انسانی حقوق گروپوں کے مطابق طالبان نے انسانی اور خواتین کے حقوق کو برقرار رکھنے کے کئی وعدوں کی خلاف ورزی کی۔



      یہ بھی پڑھیں: 


      افغانستان میں اقوام متحدہ کے امدادی مشن کے مطابق اب تک 53 افراد ہلاک اور 110 زخمی ہوچکے ہیں جن میں نوعمر اور نوجوان خواتین سب سے زیادہ متاثر ہوئی ہیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: