ہوم » نیوز » عالمی منظر

کناڈا پناہ گزینوں کو نہیں روکے گا ،پیرس حملوں کے بعد سیکورٹی کا دباؤ بڑھا

مونٹیریال۔ کناڈا کے نئے وزیراعظم جسٹن ٹروڈیو نے کہا ہے کہ جنوری سے پہلے ہم پچیس ہزار شامی پناہ گزینوں کو ملک میں آنے دیں گے۔

  • UNI
  • Last Updated: Nov 16, 2015 07:31 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
کناڈا پناہ گزینوں کو نہیں روکے گا ،پیرس حملوں کے بعد سیکورٹی کا دباؤ بڑھا
مونٹیریال۔ کناڈا کے نئے وزیراعظم جسٹن ٹروڈیو نے کہا ہے کہ جنوری سے پہلے ہم پچیس ہزار شامی پناہ گزینوں کو ملک میں آنے دیں گے۔

مونٹیریال۔  کناڈا کے نئے وزیراعظم جسٹن ٹروڈیو نے کہا ہے کہ جنوری سے پہلے ہم پچیس ہزار شامی پناہ گزینوں کو ملک میں آنے دیں گے۔ تاہم ان میں ان لوگوں کی سخت جانچ کےلئے دباو بڑھ گیا ہے۔ کیونکہ ان لوگوں کے ساتھ مل کر اسلامی مملکت کے لوگ یہاں داخل ہوسکتے ہیں۔


پیرس میں جمعہ کے روز سلسلہ وار حملے ہوئے تھے جس کے بعد یوروپ اور شمالی امریکہ میں متعدد لیڈروں نے خبردار کیا ہے کہ جو ممالک ہزاروں پناہ گزینوں کو اپنے ملک میں بسا رہے ہیں وہ بہت بڑا خطرہ اٹھارہے ہیں۔ کیونکہ ان میں خطرناک انقلابی شامل ہوسکتے ہیں ، اس لئے ان لوگوں کی سختی سےجانچ کرنا لازمی ہے ۔ پیرس کا بیلجیئم میں رہنے والا حملہ آور ابھی فرار ہے اور اندیشہ ہے کہ وہ پنا ہ گزینوں میں شامل ہوسکتا ہے۔


ٹروڈیو پچھلے ماہ سیکورٹی اور پناہ گزینوں کے معاملہ پر الیکشن جیت کر اقتدار میں آئے ہیں انہوں نے کل کہا کہ ہم پناہ گزینوں کو اپنے ملک میں آنے دیں گے اور انہیں اپنے شہریوں میں شامل کریں گے ۔ نئے سال کی آمد سےقبل ہم 25 ہزار شامی پناہ گزینوں کو قبول کرلیں گے۔

کناڈا میں عموماً اور فرانسیسی زبان بولنے والوں کے صوبہ کیوبک میں خصوصاً یہ بحث چھڑ گئی ہے کہ پناہ گزینوں کی آمد ٹھیک ہے یا نہیں کہیں ان میں انقلابی مسلمان نوجوان شامل نہ ہوں اور یہاں بھی کہیں فرانس کی طرح حملے نہ ہوتے رہیں۔


پچھلے سال کیوبک میں پیدا ہوئے قبول اسلام کرنے والے دو نوجوانوں نے علیحدہ علیحدہ کناڈائی فوجوں پر حملے کئے تھے ۔ جس میں دو جوان مارے گئے تھے۔ کیوبک کے ایک شہری نے عدالت میں عرضی دی ہے کہ پناہ گزینوں کی آمد روک دی جائے کیونکہ جہادیوں کی دراندازی ہوسکتی ہے ۔ اس عرضی پر 33 ہزار لوگوں کے دستخط ہیں۔ایک شخص نے عرضی کے ساتھ لکھا ہےہمیں ان لوگوں کی مدد تو ضرور کرنی چاہئے مگر انہیں کےملک میں وہاں ایک کیمپ قائم کرکے ان کی مدد کرنی چاہئے۔ لیکن ہم کچھ عرصہ کے لئے یا طویل مدت کےلئے اپنےملک میں بسنے دینا غیر معقول ہے اور خطرناک ہوسکتا ہے۔ پیرس حملہ سے پہلے بھی اس کی مخالفت کی جارہی تھی۔ شہر میں ایک پل کے اوپر بینر لگا تھا پناہ گزیں نہیں ۔ شکریہ۔


اپوزیشن کنزرویٹیو جو 9 سال اقتدار میں رہنے ،کے بعد پچھلے ماہ ہارےہیں، وزیراعظم سے کہا ہے کہ وہ پناہ گزینوں کی آمد کے وقت کناڈا کی سلامتی کا خیال رکھیں اور احتیاط سے کام لیں۔ کناڈا میں ترک، اردن اور لبنان سے پارٹی کےجہاز اور ہوائی جہاز کے ذریعہ پناہ گزیں لائے جائیں۔ روزانہ ایک ہزار کی سیکورٹی جانچ کی جائے گی، فرانس پر دہشت گردانہ حملوں کے بعد سے پناہ گزینوں کی آمد کے بارے میں بحث چھڑ گئی ہے۔

First published: Nov 16, 2015 07:30 PM IST