اپنا ضلع منتخب کریں۔

    شیخ احمد نواف الاحمد الصباح بنےکویت کے نئے وزیر اعظم، PM Modi نے کیا نیک خواہشات کا اظہار

    تصویر بشکریہ ٹوئٹر: @yousof_lawyer

    تصویر بشکریہ ٹوئٹر: @yousof_lawyer

    وزیر اعظم نریندر مودی نے ٹوئٹ کیا کہ کویت کے وزیر اعظم کے طور پر ان کی تقرری پر عزت مآب شیخ احمد نواف الاحمد الصباح کو میری مبارکباد اور نیک خواہشات۔ میں اپنے بہترین باہمی تعلقات کو مزید بہتر اور وسعت دینے کے لیے ان کے ساتھ کام کرنے کا منتظر ہوں۔

    • Share this:
      وزیر اعظم نریندر مودی (Prime Minister Narendra Modi) نے پیر کے روز شیخ احمد نواف الاحمد الصباح (Sheikh Ahmad Nawaf Al Ahmed Al-Sabah) کو کویت (Kuwait) کے وزیر اعظم کے طور پر ان کی تقرری پر نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ ملک کے حکمران نے شیخ احمد کو وزیر اعظم مقرر کیا ہے۔

      وزیر اعظم نریندر مودی نے ٹوئٹ کیا کہ کویت کے وزیر اعظم کے طور پر ان کی تقرری پر عزت مآب شیخ احمد نواف الاحمد الصباح کو میری مبارکباد اور نیک خواہشات۔ میں اپنے بہترین باہمی تعلقات کو مزید بہتر اور وسعت دینے کے لیے ان کے ساتھ کام کرنے کا منتظر ہوں۔

      اب کویت کے حکمران کے بڑے بیٹے شیخ احمد نواف الاحمد الصباح کو نیا وزیر اعظم مقرر کر دیا گیا ہے، جنھوں نے سیاسی کشمکش سے دوچار ملک میں نئے انتخابات سے قبل پارلیمنٹ کے تحلیل ہونے کی راہ ہموار کر دی ہے۔ نئے وزیر اعظم پہلے کویت کے وزیر داخلہ اور نیشنل گارڈ کے نائب سربراہ تھے۔ اوپیک ملک کے امیر شیخ نواف الاحمد الصباح کی جانب سے مقننہ کو تحلیل کرنے کا حکم نامہ جاری کرنے سے پہلے انھیں اب نئی حکومت تشکیل دینی ہوگی۔

      سابق میں غیر یقینی صورت حال:

      اپریل 2022 میں کویت کی حکومت نے اپنے قیام کے چند ماہ بعد ہی استعفیٰ دے دیا تھا، جس کی وجہ سے ملک میں نئی غیر یقینی صورتحال پیدا ہوئی تھی۔ کیونکہ یہ چھوٹا ملک بگڑتے ہوئے سیاسی بحران سے دوچار تھا۔ اس دوران اہم اقتصادی اور سماجی اصلاحات کو روک دیا گیا۔ کویت کے سابق وزیر اعظم شیخ صباح الخالد الحمد الصباح نے پارلیمنٹ میں عدم اعتماد کے ووٹ سے قبل کابینہ کا استعفیٰ ولی عہد کو پیش کیا جو ایک ہفتہ بعد منظورہوا۔

      یہ گزشتہ ڈیڑھ سال میں کویت کی تیسری اجتماعی حکومت کا استعفیٰ ہے۔ حزب اختلاف کے بلاکس کو خوش کرنے کے لیے کچھ اراکین سمیت نئے چہروں کی ایک بڑی تعداد کو حال ہی میں دسمبر میں وزارتی عہدوں پر تعینات کیا گیا تھا، ان کے استعفیٰ سے اب اصلاحات کرنے میں ان کی ناکامی کی عکاسی ہوتی ہے۔

      وزراء کی کونسل نے اپریل میں وزیر اعظم شیخ صباح الخالد الصباح کو ہٹانے کے لیے منتخب قانون سازوں کے دباؤ کو روکنے کے لیے استعفیٰ دے دیا تھا۔ دو ماہ بعد امیر نے اعلان کیا کہ پارلیمنٹ کو تحلیل کر دیا جائے گا کیونکہ اس تعطل نے پالیسی سازی میں خلیج کو مزید گہرا کر دیا ہے۔

      کابینہ کی سربراہی کا تجربہ:

      مزید پڑھیں: 

      شیخ صباح نے گزشتہ دو سال میں چار کابینہ کی سربراہی کی تھی، ان کا دور پارلیمنٹ میں بڑھتی ہوئی اپوزیشن اور بدعنوانی کے اسکینڈلز کی وجہ سے متاثر ہوا، جن میں کچھ مبینہ طور پر اعلیٰ عہدے دار بھی شامل تھے۔ کویت کے حکمران نے ڈیڈ لاک کے درمیان پارلیمنٹ تحلیل کر دی اور پولنگ کا اعلان کردیا گیا۔

      مزید پڑھیں: 


      ولی عہد شیخ مشعل الاحمد الصباح کی طرف سے گزشتہ ماہ ٹیلی ویژن پر نشر ہونے والی تقریر میں امیر نے متنبہ کیا تھا کہ سیاسی تعطل کو توڑنے میں ناکامی مزید سخت اقدامات کا باعث بن سکتی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: