ہوم » نیوز » عالمی منظر

پاکستان میں حافظ سعید کے خلاف دہشت گردی کے معاملے کوہٹانے کی کوشش، عدالت نے بھیجا نوٹس توکھل گئی بات

پاکستان، کشمیر پرشورکی آڑ میں اپنے سب سے خونخواردہشت گرد لشکرطیبہ اورجماعت الدعوۃ کے سربراہ حافظ سعید کے خلاف دہشت گردی کے کیس ہٹانے کی کوشش کررہا ہے۔

  • Share this:
پاکستان میں حافظ سعید کے خلاف دہشت گردی کے معاملے کوہٹانے کی کوشش، عدالت نے بھیجا نوٹس توکھل گئی بات
ممبئی میں 2008 میں ہوئے دہشت گردانہ حملے میں حافظ سعید ہندوستان میں وانٹیڈ ہے۔ اس حملے میں 10 دہشت گردوں نے 166 معصوموں کو موت کے گھاٹ اتار دیا تھا۔

پاکستان نےاس وقت پوری دنیا میں کشمیرکو لےکرکافی شورمچا رکھا ہے، لیکن اس کی آڑ میں وہ اپنے سب سےخونخواردہشت گرد لشکرطیبہ اورجماعت الدعوہ کےسربراہ حافظ سعید کےخلاف دہشت گردی کےکیس ہٹانے کی کوشش کررہا ہے۔ اس بات کا انکشاف ہوا ہے پاکستان کی لاہورہائی کورٹ کے پاکستانی کاونٹرٹیررازم ڈپارٹمنٹ کےنوٹس جاری کرنے سے۔


پوری دنیا میں جب یہ بات مانی جاتی ہےکہ حافظ سعید اس وقت دنیا کےسب سے خطرناک دہشت گردوں میں سےایک ہے اوردنیا کےتمام ممالک نےمل کرجب لشکرکےسربراہ کو عالمی دہشت گرد قراردے رکھا ہے۔ اس وقت پاکستانی عدالت میں حافظ سعید سمیت کچھ دیگر دہشت گردوں پرسے دہشت گردانہ معاملات کوہٹائےجانےکا مطالبہ کیا گیا تھا۔


دو ہفتے میں عدالت میں جواب دینے کوکہا


عدالت نےاپنی نوٹس میں پاکستان کےکاونٹرٹیررازم ڈپارٹمنٹ اوردوسرے فریقوں سےجواب طلب کیا ہے۔ عدالت کے نوٹس میں یہ جواب دوہفتےکےاندرعدالت میں جمع کرنےکی بات کہی گئی ہے۔ اس سےقبل پاکستان کی سڑکوں پردہشت گردحافظ سعید کے پوسٹرلگا دیئے گئےتھے۔ ان پوسٹرمیں حافظ سعید کےساتھ عمران خان کودکھایا گیا تھا۔ دہشت گرد حافظ سعید اورعمران خان کے ساتھ تصویروالا یہ پوسٹرسوشل میڈیا پربھی وائرل ہورہا تھا۔ اس پوسٹرپراردو میں جشن آزادی لکھا گیا ہے۔



ان موضوعات پرپاکستانی حکومت نے اختیارکررکھی ہے خاموشی

دراصل کشمیرکے مسئلے پرگلا پھاڑنے والی پاکستانی حکومت نے اس موضوع پرخاموشی اختیارکررکھی ہے۔ اس سے سمجھ آتا ہے کہ پاکستانی حکومت اپنے یہاں پھیلے زبردست معاشی بحران، مہنگائی اورغریبی پرتوجہ نہ دینے کے ساتھ ہی دہشت گردی کو پالنے کا بھی کام کررہی ہے۔ یہ بھی کہا جاسکتا ہے کہ پاکستان اپنے ہزارگناہوں اوراپنے یہاں پنپ رہی دہشت گردی جیسی برائیوں کوکشمیرپراپنے شورکے پیچھے چھپانا چاہتا ہے، لیکن یہ طے ہے کہ اکتوبرمیں ہونے والے ایف اے ٹی ایف کی تشخیص میں اس کا بلیک لسٹ میں جانا اب بالکل طے لگتا ہے۔
First published: Aug 27, 2019 05:07 PM IST