اپنا ضلع منتخب کریں۔

    یوروپ کی انسانی حقوق کی عدالت نے سنایا ’تاریخی فیصلہ‘،تائیوان کے ایک شخص کو چین کو سونپنے پر لگائی روک

    یوروپ کی انسانی حقوق کی عدالت نے سنایا ’تاریخی فیصلہ‘،تائیوان کے ایک شخص کو چین کو سونپنے پر لگائی روک

    یوروپ کی انسانی حقوق کی عدالت نے سنایا ’تاریخی فیصلہ‘،تائیوان کے ایک شخص کو چین کو سونپنے پر لگائی روک

    ججوں نے ہنگ تاو لیو کی پانچ سال کی حراست پر بھی فیصلہ سنایا، جب کہ انہوں نے اپیل کی تھی کہ سپردگی کی اپیل غیر قانونی تھی۔ وی او اے نے کہا کہ فیصلہ جنوری میں لاگو ہوسکتا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Taiwan
    • Share this:
      یوروپ کی انسانی حقوق عدالت نے ایک تاریخی فیصلہ سناتے ہوئے تائیوان کے ایک شخص کو چین کو سونپنے پر روک لگادی ہے۔ میڈیا رپورٹوں کے مطابق، یوروپین کورٹ آف ہیومن رائٹس (ای سی ایچ آر) نے متفقہ طور پر سے پایا ہے کہ ایک تائیوانی شہری کا چین میں سرینڈر، اسے غیر مناسب رویے اور مظالم کا سامنا کرواسکتا ہے۔ پولینڈ کی عدالتوں نے پہلے سپردگی کو منظوری دے دی تھی۔

      وائس آف امریکہ (وی او اے) کی رپورٹ کے مطابق، اکتوبر میں ایک فرانسیسی عدالت نے فیصلہ سنایا تھا کہ ٹیلی کام فراڈ کے معاملے میں ملزم تائیوانی شہری کو پولینڈ سے چین کے حوالے نہیں کیا جانا چاہیے کیونکہ اسے ناروا سلوک یا مظالم کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے اور غیر جانبدار سماعت تک اس کی پہنچ نہیں ہوسکتی ہے۔ ججوں نے ہنگ تاو لیو کی پانچ سال کی حراست پر بھی فیصلہ سنایا، جب کہ انہوں نے اپیل کی تھی کہ سپردگی کی اپیل غیر قانونی تھی۔ وی او اے نے کہا کہ فیصلہ جنوری میں لاگو ہوسکتا ہے۔

      ای سی ایچ آر میں لیو کے وکیل، پولینڈ کے قانون کے پروفیسر مارسن گورسکی نے وی او اے کو بتایا کہ کُل ملا کر معاملے کا نتیجہ یہ ہے کہ بنیادی طور سے آپ کی شخصی حالت کی پرواہ کیے بغیر، چاہے آپ چین میں کسی بھی قسم کی اپوزیشن سرگرمیوں میں شامل ایک سیاسی کارکن ہوں یا نہیں۔۔۔ آپ کو چین کے حوالے نہیں کیا جانا چاہیئے۔ کیونکہ بنیادی طور پر اس بات کا امکان ہے کہ کسی بھی ذمہ دار شخص کے ساتھ برا سلوک کیا جائے گا۔

      یہ بھی پڑھیں:
      افغان خواتین پرجموں اورعوامی حماموں کےاستعمال پر پابندی، اقوام متحدہ نےکیا تشویش کااظہار

      یہ بھی پڑھیں:
      روسی ساختہ میزائل سے دو افراد کی ہلاکت کے بعد پولینڈ کی فوج الرٹ پر، آخر کیا ہے وجہ؟

      اس سے پہلے لیو کی سپردگی کو پولینڈ کے قانونی عہدیداروں کی جانب سے منظوری دے دی گئی تھی، جس میں پولینڈ کی سپریم کورٹ بھی شامل تھی۔ درخواست گزار نے کہا کہ اسے چین کو حوالے کرنا مظالم اور ناروا سلوک کے ساتھ ساتھ غیر جانبدار جانچ کے حق سے محروم کردے گا، اور اس تعلق سے ای سی ایچ آر کے آرٹیکل 3 اور 6 کی خلاف ورزی ہوگی۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: