ہوم » نیوز » عالمی منظر

خواتین چلا رہی ہیں سیکس اور شادی سے پرہیز  کے لئے مہم،  بچے نہ  پیدا کرنےکی دی صلاح

خواتین کے ذریعے چلائے جارہے "نومیرج وومین" مہم کی وجہ سے دونوں ملک دنیا کے سب سے کم جنم شرح والے ملکوں میں شامل ہوگئے ہیں۔ جاپان پہلے اور جنوبی کوریا آٹھویں مقام پر آگیا ہے۔ کوریا میں تو خواتین 'ہیش ٹیگ نو میرج وومین' مہم چلا رہی ہیں۔

  • Share this:
خواتین چلا رہی ہیں سیکس اور شادی سے پرہیز  کے لئے مہم،  بچے نہ  پیدا کرنےکی دی صلاح
اس مہم کے تحت خواتین ساتھیوں اور دیگر خواتین کو نو ڈیٹنگ، نو سیکس، نو میرج اور نو چلڈرین کی پالیسی کا تعریف کررہی ہیں۔ سب سے خاص بات کہ اس کے تحت خواتین ماں بننے کے سکھ سے محروم رہنے یعنی کہ بچہ پیدا کرنے سے بھی بچ رہی ہیں۔

نو میرج وومین: وہ دن اب گزرے وقت کی بات بنتے جارہے ہیں جب خواتین گھر کی چار دیواری اور کچن میں ہی قید ہوکر رہ جاتی تھیں۔ خواتین نہ صرف اقتصادی طور سے خودکفیل ہو گئی ہیں بلکہ اپنے حقوق اور اپنی آزادی کو لیکر کافی بیدار بھی ہوئی ہیں۔ اس پہل میں جنوبی کوریا و جاپان میں خواتین نے ایک انوکھی مہم شروع کی ہے۔ اس مہم کا نام ہے "نو میرج وومین" مہم۔ آیئے جانتے ہیں کہ آخر خواتین کیوں یہ مہم چلا رہی ہیں اور ان کا مقصد کیا ہے۔

دراصل جنوبی کوریا اور جاپان میں خواتین کے ذریعے شروع کی گئی نو میرج وومین کا مقصد ہے کہ شادی نہ کرنے کو بڑھاوادینا۔ اس مہم اور خواتین کے شادی نہ کرنے کی وجہ سے (ملک میں جنوبی کوریا اور جاپان ) میں مالی بحران کھڑا ہوگیا ہے۔

اس مہم کے تحت خواتین ساتھیوں اور دیگر خواتین کو نو ڈیٹنگ، نو سیکس، نو میرج اور نو چلڈرین کی پالیسی کا تعریف کررہی ہیں۔ سب سے خاص بات کہ اس کے تحت خواتین ماں بننے کے سکھ سے محروم رہنے یعنی کہ بچہ پیدا کرنے سے بھی بچ رہی ہیں۔

خواتین کے ذریعے چلائے جارہے "نومیرج وومین"  مہم  کی  وجہ سے  دونوں  ملک  دنیا  کے  سب  سے  کم  جنم  شرح  والے  ملکوں  میں  شامل  ہوگئے ہیں۔  جاپان پہلے اور جنوبی کوریا آٹھویں مقام پر آگیا ہے۔ کوریا میں تو خواتین 'ہیش ٹیگ نو میرج وومین' مہم چلا رہی ہیں۔

First published: Dec 11, 2019 11:06 AM IST