உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کیرالہ میں Monkeypox سے آدمی کی موت، مرکز نےUAE سے پوچھا، متاثرہ مریض پرواز میں کیسے سوار ہوا

    Monkeypox Death in Kerala: اسی سلسلے میں، حکومت ہند نے متحدہ عرب امارات (یو اے ای) کے حکام سے یہ جاننے کے لیے رابطہ کیا ہے کہ نوجوان نے monkeypox سے متاثر ہونے کے بعد بھی ہندوستان کے لیے فلائٹ لی تھی۔ ذرائع کے مطابق نوجوان 22 جولائی کو کیرالہ کے لیے ہوائی جہاز میں سوار ہوا تھا، جبکہ یو اے ای میں ہی اس کی رپورٹ مثبت آئی تھی۔ ا

    • Share this:
      کیرالہ میں منکی پوکس سے ایک نوجوان کی موت کے بعد ملک میں تشویشناک صورتحال پیدا ہوگئی ہے۔ مرکزی اور ریاستی حکومت دونوں اپنی سطح سے منکی پوکس وائرس سے متعلق تمام معلومات حاصل کر رہی ہیں۔ اسی سلسلے میں، حکومت ہند نے متحدہ عرب امارات (یو اے ای) کے حکام سے یہ جاننے کے لیے رابطہ کیا ہے کہ نوجوان نے monkeypox  سے متاثر ہونے کے بعد بھی ہندوستان کے لیے فلائٹ لی تھی۔

      ذرائع کے مطابق نوجوان 22 جولائی کو کیرالہ کے لیے ہوائی جہاز میں سوار ہوا تھا، جبکہ یو اے ای میں ہی اس کی رپورٹ مثبت آئی تھی۔ ایک اہلکار نے انڈین ایکسپریس کو بتایا، ’’ہم نے متحدہ عرب امارات کے حکام سے ملاقات کی ہے تاکہ یہ معلوم کیا جا سکے کہ منکی پوکس وائرس کی مثبت رپورٹس کے باوجود نوجوان کو جہاز میں سوار ہونے کی اجازت کیوں دی گئی۔ ہم اپنے ہوائی اڈوں پر ہر ایک کی سخت اسکریننگ کر رہے ہیں اور ہم دوسرے ممالک سے بھی یہی توقع رکھتے ہیں۔

      کیرالہ میں منکی پوکس کے مشتبہ مریض کی موت کے معاملے میں ایک بڑا اپ ڈیٹ سامنے آ رہا ہے۔ سرکاری ذرائع کے حوالے سے خبر رساں ایجنسی اے این آئی نے بتایا ہے کہ مرنے والے مریض کا متحدہ عرب امارات میں منکی پوکس کا ٹیسٹ کیا گیا اور اس کا نتیجہ مثبت آیا۔ وہ 22 جولائی کو متحدہ عرب امارات سے ہندوستان پہنچے تھے۔ اس کے نمونے کی جانچ کی گئی اور 27 جولائی کو وہ ایک بار پھر منکی پوکس وائرس سے متاثر پایا گیا، جس کے بعد انہیں اسپتال میں داخل کرایا گیا۔

      اس سے قبل کیرالہ کی وزیر صحت وینا جارج نے کہا تھا کہ تھریسور کے ایک 22 سالہ لڑکے کی موت کی وجہ منکی پوکس وائرس سے انفیکشن ہونے کا شبہ ہے۔ وہ متحدہ عرب امارات میں منکی پوکس سے متاثر پایا گیا تھا اور 21 جولائی کو ہندوستان پہنچا تھا۔ متحدہ عرب امارات چھوڑنے سے ایک روز قبل ان کی ٹیسٹ رپورٹ مثبت پائی گئی۔ اب سرکاری ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ بھارت پہنچنے کے بعد بھی یہ لڑکا منکی پوکس سے متاثر پایا گیا۔ اس کے بعد انہیں تھریسور کے ایک پرائیویٹ اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔


      دہلی میں Monkeypox کے دو اور مشتبہ مریض ملے، دونوں افریقی نژاد ہیں


      ہندستان میں پائے جانے والے 4 میں سے 3 کیسز میں Monkeypox جسمانی تعلقات سے پھیلا: ذرائع


      لڑکا اپنے کنبے کے ساتھ رہ رہا تھا۔ اس لیے اس کے اہل خانہ کو بھی الگ تھلگ کر دیا گیا ہے اور ان کے نمونے آلپوزا انسٹی ٹیوٹ آف وائرولوجی کو جانچ کے لیے بھیجے گئے ہیں۔ اس بارے میں بھی تفتیش جاری ہے کہ لڑکے نے اتنے دیر سے اپنا علاج کیوں شروع کیا۔ اب تک ملک میں کیرالہ، تمل ناڈو اور دہلی میں منکی پوکس وائرس سے متاثرہ مریض پائے گئے ہیں۔ کیرالہ میں بندر پاکس کے 3 کیسز پائے گئے ہیں۔ یہ تینوں مریض متحدہ عرب امارات سے ہندوستان واپس آئے تھے۔ اگر ذرائع کی مانیں تو وہ متحدہ عرب امارات میں ہی مونکی پوکس وائرس سے متاثر ہوئے تھے۔

      Published by:Sana Naeem
      First published: