உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    روہنگیاتشدد کے لئے میانمار کی فوج ذمہ دار: اقوام متحدہ

    علامتی تصویر

    علامتی تصویر

    اقوام متحدہ نے کہا ہے کہ میانمار میں روہنگیا ئی مسلمانوں کے خلاف تشدد کے لئے وہاں کی فوج پوری طرح ذمہ دار ہے اور اس کے لئے فوج کے افسران کے خلاف مقدمہ چلایا جاناچاہئے۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:
      اقوام متحدہ نے کہا ہے کہ میانمار میں روہنگیا ئی مسلمانوں کے خلاف تشدد کے لئے وہاں کی فوج پوری طرح ذمہ دار ہے اور اس کے لئے فوج کے افسران کے خلاف مقدمہ چلایا جاناچاہئے۔ اقوام متحدہ کی تفتیشی ایجنسی نے روہنگیا کے خلاف ہوئے تشدد میں وہاں کی فوج کے سربراہ اورپانچ جنرلوں کو اس کے لئے ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے اور اس انسانیت سوز جرم کے لئے انہیں سزا ملنی چاہئے۔

      اقوام متحدہ کی جانچ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ میانمار کی اسٹیٹ کاؤنسلر آنگ سناگ سوچی نے اقلیتوں کے خلاف نفرت پھیلانے والی تقریروں کی اجازت دی اور راخین صوبہ میں تشدد کے دوران اقلیتوں کی حفاظت کرنےمیں ناکام رہی ہے۔ اقوام متحدہ کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ فوج کی کارروائی میں گاؤں میں آگ لگادی گئی۔
      اقوام متحدہ کی آزاد بین الاقوامی مالیاتی مشن نے کہا ہے کہ عراق اور شام میں یزیدی کمیونٹی کے خلاف اسلامک اسٹیٹ جس طرح تشدد کے واقعات کو انجام دے رہا ہے اور بین الاقوامی قوانین کو درکنار کررہا ہے۔اسی طرح کا تشدد روہنگیا کے خلاف کیا گیا۔
      اقوام متحدہ کے 20 صفحات پر مشتمل رپورٹ میں کہا گیا ہے روہنگیا قتل عام کے لئے میانمار کی فوج کے خلاف کافی ثبوت ہیں اور فوج کے سینئر افسران کے خلاف مقدمہ چلایا جانا چاہئے۔واضح رہے کہ میانمار میں روہنگیا کے خلاف تشدد کی وجہ سے سات لاکھ افراد جان بچاکر بنگلہ دیش میں پناہ لئے ہوئےہیں۔
      First published: