ہوم » نیوز » عالمی منظر

منیٰ حادثہ: شہید عازمین حج کی تعداد 2,177 ہو گئی

دبئی۔ سانحہ منیٰ میں جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 2 ہزار 177 تک جاپہنچی ہے۔

  • UNI
  • Last Updated: Oct 20, 2015 04:22 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
منیٰ حادثہ: شہید عازمین حج کی تعداد 2,177 ہو گئی
دبئی۔ سانحہ منیٰ میں جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 2 ہزار 177 تک جاپہنچی ہے۔

دبئی۔  سانحہ منیٰ میں جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 2 ہزار 177 تک جاپہنچی ہے۔ سانحے میں جاں بحق ہونے والوں کے حوالے سے یہ اعداد و شمار 180 میں سے ان 30 ممالک کے سرکاری میڈیا رپورٹس اور حکام کے بیانات کو سامنے رکھ کر مرتب کیے گئے ہیں، جن کے شہری رواں سال حج کے لیے گئے تھے۔


اعدادو شمار کے مطابق سانحے میں جاں بحق ہونے والے حجاج میں سب سے زیادہ تعداد ایران کی ہے جس کے 465 حاجی جاں بحق ہوئے جبکہ مالی کے 254، نائجیریا کے 199، ہندوستان کے 116، کیمرون 76، نائیجر 72، سنیگال کے 61، آؤری کوسٹ کے 52 اور بینن کے 52 حاجی سانحے میں جاں بحق ہوئے۔


سانحے میں جاں بحق ہونے والے دیگر ممالک میں مصر کے 182، بنگلہ دیش کے 137، انڈونیشیا کے 126، پاکستان کے 102، ایتھوپیا کے 47، چاڈ کے 43، موروکو کے 36، الجیریا کے 33، سوڈان کے 30، برکینا فاسو کے 22، تنزانیہ کے 20، صومالیہ کے 10، کینیا کے 8، گھانا کے 7، ترکی کے 7، میانمار کے 6، لیبیا کے 6، چین کے 4، افغانستان کے 2 جبکہ اردن اور ملائشیا کے ایک، ایک حاجی شامل ہیں۔


سانحہ منیٰ 24 ستمبر کو رمی کے دوران بھگڈر مچنے سے پیش آیا تھا جس میں جاں بحق ہونے کے ساتھ ساتھ مختلف ممالک کے سیکڑوں افراد لاپتہ بھی ہوگئے جن کی حادثے کے تقریباً ایک ماہ بعد بھی تلاش جاری ہے۔


سعودی حکام کی جانب سے حادثے کے دو دن بعد 26 ستمبر کو 769 افراد کے جاں بحق ہونے اور 934 کے زخمی ہونے کی تصدیق کی گئی تھی ، تاہم اس کے بعد حکام نے ہلاکتوں میں اضافے اور زخمیوں کے حوالے سے کوئی تصدیق نہیں کی۔


سعودی پریس ایجنسی کے مطابق اتوار کی شب سعودی ولی عہد اور وزیر داخلہ محمد بن نایف عبد العزیز کی زیر صدارت منیٰ حادثے کے حوالے سے اجلاس ہوا تاہم اس میں بھی سانحے میں جاں بحق ہونے والوں کے حوالے سے نئے اعداد و شمار پیش نہیں کیے گئے۔
خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبد العزیز کی جانب سے حج کے دوران پیش آنے والے تاریخ کے بدترین سانحے کی تحقیقات کا حکم دیا گیا تھا۔


منیٰ حادثے سے قبل رواں سال ہی مکہ معظمہ میں کرین حادثہ بھی پیش آیا تھا جس میں 111 عازمین جاں بحق ہوگئے تھے۔ ایران کی جانب سے منیٰ حادثے کے بعد حج کے تمام انتظامات کسی آزاد باڈی کو دینے کا مطالبہ کیا گیا تھا جسے سعودی عرب نے یکسر مسترد کردیا تھا۔

ایران نے سانحے کی ذمہ داری سعودی شاہی خاندان پر ڈالتے ہوئے کہا کہ حادثہ بدانتظامی کی وجہ سے پیش آیا جبکہ سانحے میں جاں بحق ہونے والوں کی اصل تعداد بھی چھپائی جارہی ہے۔ ایرانی حکومت کے مطابق سانحے میں 4 ہزار 700 سے زائد افراد جاں بحق ہوئے ہیں، تاہم اس سلسلے میں ایران کی جانب سے کوئی ثبوت سامنے نہیں آیا۔

First published: Oct 20, 2015 04:09 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading