உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کل سے شنگھائی تعاون تنظیم سربراہی اجلاس طئے، پی ایم مودی اور پوٹن کے درمیان ملاقات متوقع

    وزیر اعظم نریندر مودی  (فائل فوٹو)

    وزیر اعظم نریندر مودی (فائل فوٹو)

    Shanghai Cooperation Organisation summit: ہندوستانی وزیر اعظم نریندر مودی اور چینی صدر شی جن پنگ کے درمیان ملاقات کی بھی پیش قیاسی کی جارہی ہے۔ حالانکہ وزیر اعظم نریندر مودی اور چینی صدر شی جن پنگ کے درمیان ملاقات کے ضمن میں ابھی تک کوئی وضاحت نہیں ہوئی ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, Indiachinachinachina
    • Share this:
      کل سے یعنی 15 اور 16 ستمبر کو ازبکستان کے سمرقند میں شنگھائی تعاون تنظیم (Shanghai Cooperation Organisation) کے سربراہان مملکت کا سربراہی اجلاس طئے ہے۔ یہ دنیا کی سب سے بڑی علاقائی تنظیم کا پہلی بار فزیکل اجلاس ہوگا۔ جس میں تنظیم سے وابستہ ممالک کے سربراہان بہ نفس نفیس شامل ہوں گے۔ کئی سربراہان نے ابھرتے ہوئے عالمی نظام کے بارے میں چین اور روس کے ردعمل پر اپنی تشوش کا اظہار کیا ہے۔

      کریملن نے تصدیق کی ہے کہ روسی صدر ولادیمیر پوتن (Vladimir Putin) اور وزیر اعظم مودی ملاقات کریں گے اور بین الاقوامی تجارت سے متعلق روسی کھاد کی فروخت اور خوراک کی فراہمی پر تبادلہ خیال کریں گے۔ اس کے علاوہ مشرقی لداخ کے ہاٹ اسپرنگس میں پوائنٹ-15 سے فوجیوں کو واپس بلانے کے ہندوستان اور چین کے حالیہ فیصلے نے کئی طرح کی تجزیوں کو ہوا دی ہے۔ مودی اور چینی صدر شی جن پنگ کے درمیان دو طرفہ ملاقات کے امکان کے بارے میں قیاس قیاسی کی جارہی ہے۔ اگرچہ دونوں ممالک نے اس معاملے پر سرکاری طور پر کچھ نہیں کہا ہے۔

      وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ امکان ہے کہ وزیر اعظم سربراہی اجلاس کے دوران دیگر ممالک کے سربراہان سے بھی ملاقاتیں کریں گے لیکن تفصیلات نہیں بتائیں گئی۔ ذرائع کے مطابق مودی کی ازبک صدر شوکت مرزیوئیف اور ایرانی صدر ابراہیم رئیسی سے دو طرفہ ملاقاتیں ہو سکتی ہیں۔ شنگھائی تعاون تنظیم کے سربراہی اجلاس کے موقع پر پوٹن اور شی جن پنگ کی ملاقات کا بھی امکان ہے۔

      مودی اور ژی چوٹی اجلاس میں کم از کم دو سیشن کے لیے ایک ہی کمرے میں رہیں گے۔ اگرچہ دونوں رہنماؤں کے درمیان خوشگوار تبادلے کو مسترد نہیں کیا جا رہا ہے، لیکن اس معاملے سے واقف لوگوں کا کہنا ہے کہ ابھی تک دو طرفہ ملاقات کے بارے میں کوئی بات نہیں ہوئی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:

      ملکہ الیزابیتھ-دوئم: جب حیدرآباد کے نظام نے ملکہ کو 300 ہیروں سے جڑا ہارپیش کیا، جانئے مکمل کہانی

      مئی 2020 سے لائن آف ایکچوئل کنٹرول (LAC) کے لداخ سیکٹر میں فوجی پیش رفت کی وجہ سے ہندوستان فکر مند ہے اور نئی دہلی نے مجموعی تعلقات کو معمول پر لانے کو سرحدی علاقوں میں امن و سکون کی بحالی سے جوڑا ہے۔ وزارت خارجہ نے گزشتہ ہفتے کہا تھا کہ پی پی ۔ 15 پر ڈی ایسکلیشن کے بعد دونوں ممالک کو بات چیت کو آگے بڑھانا چاہیے اور ایل اے یس پر باقی مسائل کو حل کرنا چاہیے۔

      یہ بھی پڑھیں:

      ہندوستان۔ سعودی عرب تعلقات میں ہوگی نئی پہل، جے شنکر کی سعودی ولی عہد MbS سے ملاقات



      اس دوران ہندوستانی وزیر اعظم نریندر مودی اور چینی صدر شی جن پنگ کے درمیان ملاقات کی بھی پیش قیاسی کی جارہی ہے۔ حالانکہ وزیر اعظم نریندر مودی اور چینی صدر شی جن پنگ کے درمیان ملاقات کے ضمن میں ابھی تک کوئی وضاحت نہیں ہوئی ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: