உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Pakistan: پاکستان کی شیعہ مسجد میں بم دھماکہ، کم از کم 57 افراد ہلاک، رپورٹ طلب

    Youtube Video

    لیڈی ریڈنگ ہسپتال کے ایمرجنسی ڈیپارٹمنٹ میں افراتفری مچ گئی جب ڈاکٹروں کو بہت سے زخمیوں کو آپریشن تھیٹر میں منتقل کرنے کی جدوجہد کرنا پڑی۔ وزیراعظم عمران خان نے بم دھماکے کی مذمت کی۔ اکثریتی سنی مسلم پاکستان میں اقلیتی شیعہ مسلمانوں پر بار بار حملے ہوتے رہے ہیں۔

    • Share this:
      پاکستان کے شمال مغربی شہر پشاور (Peshawar) میں جمعہ کو شیعہ مسلمانوں کی ایک مسجد کے اندر ایک زور دار بم دھماکہ ہوا، جس میں 30 سے ​​زائد نمازی ہلاک اور درجنوں زخمی ہوئے، جن میں سے کئی کی حالت نازک ہے۔

      پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کے دفتر (Prime Minister's Office, Pakistan) کے ذرائع نے ٹوئٹ کیا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان نے پشاور دھماکے کی شدید مذمت کی ہے۔ قیمتی جانوں کے ضیاع پر اظہارِ افسوس اور زخمیوں کو فوری طبی امداد فراہم کرنے کی ہدایت دی ہے۔ واقع کی رپورٹ طلب کر لی گئی ہے۔
      مسلم لیگ نون کی نائب صدر مریم نواز شریف پشاور میں دہشت گردی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہوں۔ہمارے شہروں میں پھر سے بارود کی بو پریشان کن ہے، جانوں کے نذرانے پیش کرکہ قائم کیا گیا امن نااہلی کی نذر ہو گیا۔اللّہ تعالیٰ پاکستان اور اس میں بسنے والوں پر اپنا رحم فرمائے،زخمیوں کو صحت یاب کرے اور شہدا کے خاندانوں کو صبر دے۔




      مقامی پولیس اہلکار وحید خان نے بتایا کہ دھماکہ اس وقت ہوا جب نمازی جمعہ کی نماز کے لیے پشاور کے پرانے شہر کی کچہ رسالدار (Kucha Risaldar) مسجد میں جمع تھے۔ ایمبولینسیں بھیڑ بھری تنگ گلیوں سے ہوتی ہوئی زخمیوں کو لیڈی ریڈنگ ہسپتال لے گئیں، جہاں ڈاکٹروں ایمرجنسی خدمات فراہم کی۔



      فوری طور پر کسی نے دھماکے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے، لیکن ماضی میں اسلامک اسٹیٹ گروپ اور ایک پرتشدد پاکستانی طالبان تنظیم دونوں نے پڑوسی ملک افغانستان کی سرحد کے قریب واقع خطے میں ایسے ہی حملے کیے ہیں۔ ایک عینی شاہد شیان حیدر مسجد میں داخل ہونے کی تیاری کر رہا تھا کہ ایک زور دار دھماکے نے اسے سڑک پر پھینک دیا۔ انہوں نے کہا کہ میں نے آنکھیں کھولیں تو ہر طرف مٹی اور لاشیں تھیں۔



      کسی نے قبول نہیں کی حملے کی ذمہ داری

      پولیس افسر وحید خان نے اے پی نیوز ایجنسی کو بتایا کہ دھماکہ اس وقت ہوا جب لوگ کوچہ رسالدار مسجد میں نماز کی ادائیگی کے لیے جمع تھے۔ ابھی تک کسی تنظیم نے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔ عینی شاہدین میں سے ایک شایان حیدر بھی مسجد میں داخل ہو رہا تھا کہ ایک زور دار دھماکہ ہوا۔ جس کی وجہ سے وہ سڑک پر گر گیا۔ اس نے کہا، 'میں نے آنکھ کھولی تو ہر طرف مٹی اور لاشیں بکھری پڑی تھیں۔' پشاور کے سی سی پی او کے اکاؤنٹ کے مطابق جائے وقوعہ سے شواہد اکٹھے کر لیے گئے ہیں۔ لیکن یہ کہنا قبل از وقت ہے کہ دھماکہ کس نوعیت کا تھا۔

      اسپتال میں افراتفری

      لیڈی ریڈنگ اسپتال کے ایمرجنسی ڈیپارٹمنٹ میں افراتفری مچ گئی۔ کئی زخمیوں کو آپریشن تھیٹر تک لے جانے میں ڈاکٹروں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ ترجمان نے کہا کہ اسپتال کو ریڈ الرٹ پر رکھا گیا ہے اور مزید طبی عملے کو ایل آر ایچ میں بلایا گیا ہے۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ اس علاقے میں بہت سے بازار ہیں اور نماز جمعہ کے وقت بہت زیادہ ہجوم ہوتاہے-

      وزیر اعظم عمران خان نے حملے کی شدید مذمت کی اور زخمیوں کو فوری طبی امداد کی ہدایت کی۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: