افغان حکومت کا ملا عمر کی موت کا دعوی ، طالبان نے تردید کی

افغان حکومت کا کہنا ہے کہ طالبان کے رہنما ملا عمر کی موت ہوچکی ہے۔ تاہم طالبان نے سرکاری دعوی پر کوئی ردعمل ظاہر کرنے سے انکار کردیا ہے۔

Jul 29, 2015 07:44 PM IST | Updated on: Jul 29, 2015 07:45 PM IST
افغان حکومت کا ملا عمر کی موت کا دعوی ، طالبان نے تردید کی

کابل :  افغان حکومت کا کہنا ہے کہ طالبان کے رہنما ملا عمر کی موت ہوچکی ہے۔ تاہم طالبان نے سرکاری دعوی پر کوئی ردعمل ظاہر کرنے سے انکار کردیا  ہے۔افغان اور پاکستان میڈیا رپورٹوں کے مطابق ملا عمر 2001 کے بعد سے منظر عام پر نہیں آئے ہیں۔ افغان حکومت اور خفیہ ایجنسیوں کا کہنا ہے کہ ملا عمر کی موت دو تین سال پہلے ہی ہوچکی ہے۔ تاہم اس سلسلے میں کوئی تفصیل نہیں دی گئی ہے۔ادھر طالبان کے ترجمان نے کہا کہ اس سلسلے میں بیان جاری کیا جائے گا۔ طالبان پہلے بھی ملا عمر کے کئی ویڈیو بیان جاری کرچکا ہے۔خیال رہے کہ ملا عمر کی موت کی خبر پہلے بھی کئی بار آچکی ہے لیکن یہ پہلا موقع ہے جب افغان حکومت نے اس کی تصدیق کی ہے۔واضح رہے کہ امریکہ نے ملا عمر کی گرفتاری پر ایک کروڑ ڈالر کے انعام کا اعلان کررکھا ہے۔

دوسری جانب امریکی خبر رساں ادارے وائس آف امریکا کے مطابق افغان طالبان نے  دعوے کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملا عمر بخیریت اور مکمل صحت یاب ہیں، ان کے انتقال کی بے بنیاد خبریں پھیلانے کا مقصد افغان حکومت اور طالبان کے درمیان جاری مذاکراتی عمل کوسبوتاژ کرنا ہے۔

واضح رہے کہ 2001 میں امریکی حملے کے بعد سے ملا عمر کو کسی نہیں دیکھا ہے۔ وہ گذشتہ 14 سالوں سے روپوشی کی زندگی گزار رہے ہیں۔ عید الفطر کے موقع پر ایک پیغام میں ملا عمر نے افغانستان میں امن کے لیے بات چیت کو جائزقراردیا تھا تاہم انہوں نے افغان حکومت اورطالبان رہنماؤں کے مذاکرات کا براہ راست کوئی ذکر نہیں کیا تھا۔

Loading...

Loading...