ہوم » نیوز » عالمی منظر

چین میں کورونا وائرس کا قہرجاری: مہلوکین کی تعداد 500 کے قریب پہنچی

ڈبلیو ایچ او نے چین کے باہر نو دیگر ممالک میں کورونا وائرس کے انسان سے انسانوں کے متاثر ہونے کے 27 کیسز کی فہرست تیار کی ہے۔

  • Share this:
چین میں کورونا وائرس کا قہرجاری: مہلوکین کی تعداد 500 کے قریب پہنچی
دراصل کورونا وائرس کی دہشت پوری دنیا میں پھیل گئی ہے ۔ یہ وائرس چین سے شروع ہوا اور اب دنیا کے درجنوں ممالک اس کی زد میں آگئے ہیں ۔ ہندوستان میں بھی اس کے کچھ مشبتہ معاملات سامنے آچکے ہیں ۔ ابھی تک اس بیماری کی وجہ سے چین میں 490 سے زیادہ لوگوں کی موت ہوچکی ہے ۔ اس وائرس کو لے کر ائیر پورٹ پر سب سے زیادہ احتیاط برتی جارہی ہے ۔ ہندوستان کے 21 ائیر پورٹس پر اس وائرس کو جانچ کے دائرے میں رکھا گیا ہے ۔ فائل فوٹو ۔

چین میں کورونا وائرس سے مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 490 ہو گئی ہے جبکہ 24،324 افراد میں اس کے انفیکشن کی تصدیق ہوئی ہے۔چین کی سرکاری ہیلتھ کمیٹی نے بدھ كو ایک بیان جاری کر کے یہ اطلاع دی۔اس سے پہلے منگل کو جاری رپورٹ کے مطابق کورونا وائرس سے 425 افراد ہلاک اور 20،438 معاملات کی تصدیق ہوئی تھی۔


چین کی سرکاری ہیلتھ کمیٹی کے مطابق چار فروری کی آدھی رات تک اس کے 31 صوبوں سے اطلاع ملی ہے ، جس کے مطابق کورونا وائرس کے 24،324 معاملات کی تصدیق کی جا چکی ہے جس میں 3،219 لوگوں کی حالت نازک بتائی جارہی ہے۔ 490 لوگوں کی موت ہو چکی ہے اور 892 لوگوں کو اسپتال سے چھٹی دے دی گئی ہے۔


کورونا وائرس


وہیں دوسری جانب عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کی رپورٹ کے مطابق دنیا بھر میں کورونا وائرس کے اب تک 20،600 سے زیادہ کیس سامنے آ چکے ہیں۔ڈبلیو ایچ او کی منگل کو جاری رپورٹ کے مطابق چین میں اب تک کورونا وائرس کے 20،471 معاملات کی تصدیق ہو چکی ہے جبکہ 23،214 دوسرے لوگوں میں کورونا وائرس کے ہونے کا شبہ ہے۔


کورونا وائرس کی وجہ سے اب تک 425 افراد کی موت ہو چکی ہے جن میں زیادہ تر عمر دراز افراد شامل ہیں۔کورونا وائرس سے متاثر 2788 مریضوں کی حالت نازک بتائی جارہی ہے جبکہ 680 لوگ اس بیماری سے شفا یاب ہو چکے ہیں۔

ڈبلیو ایچ او کی تازہ رپورٹ کے مطابق چین سے باہر 24 ممالک میں کورونا وائرس کے 176 کیسز کی اب تک تصدیق ہو چکی ہے۔ڈبلیو ایچ او نے چین کے باہر نو دیگر ممالک میں کورونا وائرس کے انسان سے انسانوں کے متاثر ہونے کے 27 کیسز کی فہرست تیار کی ہے۔
First published: Feb 05, 2020 10:02 AM IST