ہوم » نیوز » عالمی منظر

نیپال کی صدر نے دی متنازعہ نقشے والے ترمیمی بل کو منظوری، ہندوستان کے تین علاقوں کو اپنے میں شامل کیا

نیپال (Nepal) کی صدر بدھیا دیوی بھنڈاری (Bidhya Devi Bhandari) نے جمعرات کو اس ترمیمی بل کو منظوری دے دی، جس کے ذریعہ نیپال اپنا نیا نقشہ جاری کر رہا ہے۔ اس متنازعہ نقشے میں ہندوستان (India) کے تین علاقوں کو نیپال اپنا حصہ بتا رہا ہے۔

  • Share this:
نیپال کی صدر نے دی متنازعہ نقشے والے ترمیمی بل کو منظوری، ہندوستان کے تین علاقوں کو اپنے میں شامل کیا
نیپال کے صدر نے دی متنازعہ نقشے والے ترمیمی بل کو منظوری

نئی دہلی: نیپال (Nepal) کی صدر بدھیا دیوی بھنڈاری (Bidhya Devi Bhandari) نے جمعرات کو اس ترمیمی بل کو منظوری دے دی، جس کے ذریعہ نیپال اپنا نیا نقشہ جاری کر رہا ہے۔ اس متنازعہ نقشے میں ہندوستان (India) کے تین علاقوں کو نیپال اپنا حصہ بتا رہا ہے۔ واضح رہے کہ ہندوستان کی سخت مخالفت کے باوجود نیپال کے پارلیمنٹ نے اس نئے سیاسی نقشے کو تازہ ترین کرنے کے لئے آئین میں جمعرات کو ترمیم کردیا، جس میں سیاسی طور پر اہم ہندوستان کے تین علاقوں کو شامل کیا گیا ہے۔


ہندوستان نے نیپال کے نقشے میں تبدیلی کرنے اور کچھ ہندوستانی علاقوں کو اس میں شامل کرنے سے متعلق آئینی ترمیمی بل کو نیپالی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں میں منظور کئے جانے پر ہفتہ کو ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ مصنوعی توسیع کا ثبوت اور تاریخی حقائق پر مبنی نہیں ہے اور یہ منظور نہیں ہے۔




ہندوستان نے نومبر 2019 میں ایک نیا نقشہ جاری کیا تھا، جس کے تقریباً 6 ماہ بعد نیپال نے گزشتہ مہینے ملک کی ترمیمی سیاسی اور انتظامی نقشہ جاری کرکے حکمت عملی کے لحاظ سے اہم ان علاقوں پر اپنا دعویٰ بتایا تھا۔ نیپالی پارلیمنٹ کے ایوان بالا یعنی نیشنل اسمبلی نے آئینی ترمیمی بل کو اتفاق رائے سے منظور کردیا۔ اس کے بعد نیپال کے نقشے کو بدلنے کا راستہ صاف ہوگیا۔

ہندوستان کی سخت مخالفت کے باوجود نیپال کے پارلیمنٹ نے اس نئے سیاسی نقشے کو تازہ ترین کرنے کے لئے آئین میں جمعرات کو ترمیم کردیا۔
ہندوستان کی سخت مخالفت کے باوجود نیپال کے پارلیمنٹ نے اس نئے سیاسی نقشے کو تازہ ترین کرنے کے لئے آئین میں جمعرات کو ترمیم کردیا۔


نیپالی پارلیمنٹ کے ایوان بالا میں آئینی ترمیمی بل اتوار کو پیش کیا گیا تھا۔ اس سے ایک دن پہلے ایوان زیریں سے اسے اکثریت سے منظور کردیا تھا۔ ایوان بالا میں موجود سبھی 57 موجود اراکین نے بل کی حمایت میں ووٹنگ کی۔ نیشنل اسمبلی کے اسپیکر گنیش تملسنا نے بتایا کہ سبھی 57 اراکین نے بل کی حمایت میں ووٹنگ کی۔ نیپال کے ترمیمی نقشے میں ہندوستان کی سرحد سے متصل سیاسی حکمت عملی کے طور پر انتہائی اہم لپولیکھ، کالاپانی اور لمپیا دھرا علاقوں پر دعویٰ کیا گیا ہے۔ ہندوستان اور نیپال کے درمیان رشتوں میں اس وقت کشیدگی پیدا ہوگئی تھی، جب وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے 8 مئی کو اتراکھنڈ میں لپولیکھ دررے کو دھارچولا سے جوڑنے والی سیاسی طور پر اہم 80 کلو میٹر لمبی سڑک کا افتتاح کیا تھا۔
First published: Jun 18, 2020 09:59 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading