ہوم » نیوز » عالمی منظر

سعودی عرب میں سنیما پرکوئی پابندی نہیں : فہد التمیمی

سعودی عرب کی 'پروڈیوسرز وڈسٹری بیوٹرز ایسوسی ایشن' کے چیئرمین فہد التمیمی نے کہا ہے کہ ملک میں سنیما ہال کھولنے پر کسی قسم کی پابندی یا ممانعت نہیں ہے۔

  • Share this:
سعودی عرب میں سنیما پرکوئی پابندی نہیں : فہد التمیمی
سعودی عرب کی 'پروڈیوسرز وڈسٹری بیوٹرز ایسوسی ایشن' کے چیئرمین فہد التمیمی نے کہا ہے کہ ملک میں سنیما ہال کھولنے پر کسی قسم کی پابندی یا ممانعت نہیں ہے۔

ریاض۔ سعودی عرب کی 'پروڈیوسرز وڈسٹری بیوٹرز ایسوسی ایشن' کے چیئرمین فہد التمیمی نے کہا ہے کہ ملک میں سنیما ہال کھولنے پر کسی قسم کی پابندی یا ممانعت نہیں ہے۔ اگر کوئی سنیما ہال کھولنا چاہتا ہے تو اس کے لیے حکومت سے اجازت لینے میں زیادہ سے زیادہ 48 سے 72 گھنٹے ہی میں کام ہو جاتا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق فہد التمیمی نے کہا کہ ملک میں جن فلموں کی نمائش پرپابندی لگائی گئی اس کی وجہ نمائش کے لیے پیشگی اجازت حاصل نہ ہونا ہوسکتی ہے کیونکہ سعودی وزارت ثقافت اور سنیما مالکان فلموں کی نمائش سے قبل کسی بھی فلم کی نمائش کے بارے میں صلاح مشورہ کرتے ہیں اور اس کے بعد اس فلم کی نمائش کی اجازت دی جاتی ہے۔ اگر وزارت ثقافت سے فلم کی نمائش کے لیے نمائش کی اجازت مانگے بغیر کوئی فلم پیش کی جائے گی تو حکومت ایسا نہیں کرنے دے گی۔

سعودی عرب میں سنیماہالوں کی تعداد میں کمی کی وجہ بیان کرتے ہوئے فہد التمیمی نے کہا کہ اس کی بنیادی وجہ لوگوں میں سنیماکے حوالے سے شعور کا نہ ہونا ہے۔ بہت سے لوگ سنیماکے شعبے میں سرمایہ کاری کے بارے میں کچھ بھی نہیں جانتے۔ اس لیے اس شعبے میں پیسہ لگانے سے گریز کرتے ہیں ورنہ ملک میں ایسا کوئی ادارہ یا اتھارٹی نہیں جو سنیماکے قیام پر پابندی عاید کررہاہو۔ البتہ سنیما ہالوں کے قیام سے قبل اس کی رجسٹریشن لازمی ہوتی ہے جو تین سے چار دن میں حاصل ہوجاتی ہے۔

انہوں نے کہاکہ حکومت رواں ھجری سال کے اختتام تک کاروباری حضرات کو سنیما کے شعبے میں سرمایہ کاری کی ترغیب دینے کے لیے کوئی پروگرام وضع کرے گی اور اس تاثر کو زائل کیا جائے گا کہ سعودی عرب میں سینما کے قیام پر کسی قسم کی پابندی عاید ہے۔
First published: Aug 24, 2015 06:10 PM IST