اپنا ضلع منتخب کریں۔

    پہلی بارجنوبی کوریا کے حد سے زیادہ قریب شمالی کوریاکا میزائل حملہ! کیا اب دونوں ملکوں کے درمیان ہوگی جنگ؟

    حملوں کی وجہ سے شمالی کوریا پر دباؤ بڑھ گیا ہے۔

    حملوں کی وجہ سے شمالی کوریا پر دباؤ بڑھ گیا ہے۔

    جنوبی کوریا کی فوج نے کہا کہ یہ میزائل جو جنوبی کوریا کے سب سے قریب تھا، جنوبی کوریا کی سرزمین کے مشرق میں صرف 57 کلومیٹر (35 میل) دور سمندر میں گرا ہے، جسے کسی بھی طرح برداشت نہیں کیا جاسکتا ہے، یہ ہماری سلامتی پر حملے کے مترادف ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • INTER, IndiaNorth KoreaNorth KoreaNorth Korea
    • Share this:
      شمالی کوریا اور جنوبی کوریا کا نام سنتے ہی ایسا لگتا ہے کہ دونوں ملک آپس میں بھائی بھائی ہے، لیکن اس کے برعکس آئے دن دنوں ممالک کے درمیان آپسی کشیدگی اور حملوں کی خبریں آتی رہتی ہیں۔ جنوبی کوریا کی فوج نے بدھ کے روز شمالی کوریا کی فائرنگ کا جواب دیتے ہوئے سمندری سرحد پر اس جگہ فضا سے زمین پر مار کرنے والے میزائل داغے ہیں جہاں شمالی کوریا کا بیلسٹک میزائل سے حملہ ہوا تھا۔

      جنوبی کوریا کی فوج نے ایک بیان میں کہا کہ میزائلوں کو نارتھرن لمیٹ لائن کے قریب اس علاقے کے مساوی فاصلے پر سمندر میں داغا گیا جہاں شمالی کوریا کے میزائل سے حملہ کیا گیا تھا۔ اس مشق سے ظاہر ہوتا ہے کہ سٔیول (جنوبی کوریا کی دارالحکومت) کسی بھی اشتعال انگیزی کا سختی سے جواب دے گا۔ یہ جوابی کارروائی شمالی کوریا کی جانب سے بدھ کے روز 10 سے زیادہ میزائل داغے جانے کے بعد سامنے آئی ہے، جس میں ایک ایسا میزائل بھی شامل تھا جو جنوبی کوریا کے سمندر کے قریب گرا تھا جس کے بارے میں صدر یون سک یول (Suk-yeol) نے کہا کہ یہ علاقائی حملہ ہے، جسے برداشت نہیں کیا جائے گا۔

      ایک شارٹ رینج بیلسٹک میزائل نے دونوں ملکوں کے درمیان ڈی فیکٹو میری ٹائم بارڈر اور نارتھرن لمیٹ لائن کو عبور کیا، جس نے جزیرۂ اولیونگڈو (Island of Ulleungdo)کے رہائشیوں کو بنکروں میں پناہ لینے کے لیے مجبور کردیا ہے۔

      اس ضمن میں تازہ ترین اپ ڈیٹس یہ ہیں:

      - فوج نے کہا کہ یہ 1953 میں کوریائی جنگ کے خاتمے کے بعد پہلا واقع ہے کہ شمالی کوریا کا ایک میزائل جنوبی کوریا کے علاقائی سمندر کے اتنے قریب گرا ہے۔ اس طرح کا حملہ اس سے قبل نہیں کیا گیا تھا۔

      - صدر یون نے نشاندہی کی کہ شمالی کوریا کی اشتعال انگیزی ایک مؤثر علاقائی حملہ ہے جس نے دونوں ملکوں کی تقسیم کے بعد پہلی بار ’حدود کی لکیر‘ کو عبور کیا ہے۔

      - جنوبی کوریا کی فوج نے کہا کہ یہ میزائل جو جنوبی کوریا کے سب سے قریب تھا، جنوبی کوریا کی سرزمین کے مشرق میں صرف 57 کلومیٹر (35 میل) دور سمندر میں گرا ہے، جسے کسی بھی طرح برداشت نہیں کیا جاسکتا ہے، یہ ہماری سلامتی پر حملے کے مترادف ہے۔

      یہ بھی پڑھیں: 


      - جنوبی کوریا نے بدھ کے روز اپنے مشرقی ساحل کے قریب جزیرۂ الیونگڈو  کے رہائشیوں سے کہا کہ وہ شمالی کوریا کی جانب سے مختصر فاصلے کے تین بیلسٹک میزائل فائر کرنے کے بعد بنکروں کو خالی کر دیں اور محفوظ جگہ پناہ لیں۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: