اپنا ضلع منتخب کریں۔

    شمالی کوریا کا آخری ٹارگیٹ، دنیا کی مضبوط ترین ایٹمی طاقت حاصل کرنا ہے: کم جونگ ان

    کم جونگ ان نے کہا کہ شمالی کوریا کے سائنسدانوں نے " بیلسٹک میزائیلوں پر جوہری ہتھیار لگانے کی تکنی کی ترقی میں ایک حیرت انگیز چھلانگ لگائی ہے۔" حالانکہ انہوں نے اس بارے میں تفصیل سے نہیں بتایا۔

    کم جونگ ان نے کہا کہ شمالی کوریا کے سائنسدانوں نے " بیلسٹک میزائیلوں پر جوہری ہتھیار لگانے کی تکنی کی ترقی میں ایک حیرت انگیز چھلانگ لگائی ہے۔" حالانکہ انہوں نے اس بارے میں تفصیل سے نہیں بتایا۔

    کم جونگ ان نے کہا کہ شمالی کوریا کے سائنسدانوں نے " بیلسٹک میزائیلوں پر جوہری ہتھیار لگانے کی تکنی کی ترقی میں ایک حیرت انگیز چھلانگ لگائی ہے۔" حالانکہ انہوں نے اس بارے میں تفصیل سے نہیں بتایا۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Delhi | Korea
    • Share this:
      سیئول رائٹرز۔ شمالی کوریا کے لیڈر کم جونگ ان نے ملک کے سب سے بڑے بیلسٹک میزائل کے حالیہ لانچ میں شامل درجنوں فوجی افسران کو پرموٹ کیا ہے۔ اس دوران انہوں نے کہا کہ ان کے ملک کا آخری ہدف دنیا کی سب سے طاقتور جوہری طاقت حاصل کرنا ہے۔

      کم جونگ ان افسران کو بڑھاوا دینے کی ترتیب میں کہا کہ جوہری طاقت کی تعمیر کا مقصد ریاست اور عوام کے وقار اور خودمختاری کا مضبوطی سے تحفظ کرنا ہے، اور اس کا آخری ٹارگیٹ 'دنیا کی سب سے طاقتور اسٹریٹجک طاقت، مطلق طاقت کا حق ہے۔

      دنیا کا سب سے مضبوط اسٹریٹجک ہتھیار ہے ہواسونگ-17

      انہوں نے ہواسونگ-17 کو دنیا کا سب سے مضبوط اسٹریٹجک ہتھیار بتایا اور کہا کہ اس نے شمالی کوریا کے عزم اور آخر کار دنیا کی سب سے مضبوط فوج بنانے کی صلاحیت کا مظاہرہ کیا۔





      شمالی کوریا کے سائنسدانوں نے لگائی حیرت انگیز چھلانگ ۔
      کم جونگ ان نے کہا کہ شمالی کوریا کے سائنسدانوں نے " بیلسٹک میزائیلوں پر جوہری ہتھیار لگانے کی تکنی کی ترقی میں ایک حیرت انگیز چھلانگ لگائی ہے۔" حالانکہ انہوں نے اس بارے میں تفصیل سے نہیں بتایا۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: