உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Karachi: کراچی میں دھماکے کے دوران ایک شخص ہلاک، 12 افراد زخمی، کیا ہے وجہ

    عسکریت پسندوں کے حملوں میں اضافہ دیکھ ہورہا ہے۔

    عسکریت پسندوں کے حملوں میں اضافہ دیکھ ہورہا ہے۔

    مقامی پولیس سٹیشن ہاؤس آفیسر سجاد خان نے کہا کہ ابتدائی تفتیش سے معلوم ہوا ہے کہ دھماکہ خیز مواد ایک موٹر سائیکل میں نصب کیا گیا تھا جو کوڑے دان کے قریب کھڑی کی گئی تھی۔ فوری طور پر حملے کے ہدف کا اعلان نہیں کیا گیا۔

    • Share this:
      کراچی میں جمعرات کو دیر گئے ایک بم دھماکے میں ایک شخص ہلاک اور 12 افراد زخمی ہوئے ہیں۔ پولیس نے کہا کہ صرف دو ہفتے بعد اسی شہر میں پاکستان کے ایک علیحدگی پسند گروپ کے خودکش حملے میں چار افراد ہلاک ہوئے۔ پاکستان کے سب سے زیادہ آبادی والے شہر کے صدر محلے میں رات تقریباً 11:00 بجے (1800 GMT) یہ دھماکہ ہوا۔

      مقامی پولیس سٹیشن ہاؤس آفیسر سجاد خان نے کہا کہ ابتدائی تفتیش سے معلوم ہوا ہے کہ دھماکہ خیز مواد ایک موٹر سائیکل میں نصب کیا گیا تھا جو کوڑے دان کے قریب کھڑی کی گئی تھی۔ فوری طور پر حملے کے ہدف کا اعلان نہیں کیا گیا۔

      تاہم خان نے کہا کہ کوسٹ گارڈ کی ایک گاڑی دھماکے میں تباہ ہونے والے کئی لوگوں میں شامل تھی جب کہ ہلاک ہونے والا ایک شخص راہگیر تھا۔ گزشتہ ماہ ایک خاتون خودکش بمبار نے کراچی یونیورسٹی میں بیجنگ ثقافتی پروگرام کے عملے کو لے جانے والی منی بس پر حملے میں تین چینی شہریوں سمیت چار افراد کو ہلاک کر دیا تھا۔

      پاکستان کے سب سے بڑے اور غریب ترین صوبے میں آزادی کے لیے لڑنے والا ایک گروپ بلوچ لبریشن آرمی (BLA) نے 26 اپریل کے حملے کی ذمہ داری قبول کی تھی۔ واضح رہے کہ چین نے 54 بلین ڈالر کی اسکیم کے تحت بلوچستان میں توانائی اور انفراسٹرکچر پر بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کی ہے جسے چائنا پاکستان اکنامک کوریڈور کہا جاتا ہے۔ تاہم اس پروگرام نے چینی شہریوں کو بلوچ علیحدگی پسندوں کے شکنجے میں ڈال دیا ہے، جن کا کہنا ہے کہ مقامی باشندوں کو خطے میں قدرتی وسائل سے حاصل ہونے والی دولت میں ان کا منصفانہ حصہ نظر نہیں آتا۔

      اپریل 2021 میں بلوچستان کے صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں چینی سفیر کی میزبانی کرنے والے لگژری ہوٹل میں خودکش بم حملے میں چار افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہوئے اور اس جنوری میں بلوچ علیحدگی پسندوں نے مشرقی میگا سٹی لاہور میں ایک بم دھماکے میں تین افراد کو ہلاک اور 22 کو زخمی کیا۔

      پاکستان میں وسیع پیمانے پر عسکریت پسندوں کے حملوں میں اضافہ دیکھ ہورہا ہے۔ پاکستان انسٹی ٹیوٹ فار کنفلیکٹ اینڈ سیکیورٹی اسٹڈیز نے کہا کہ مارچ اور اپریل کے درمیان حملوں میں 24 فیصد اضافہ ہوا ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: