உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان الیکشن: سیاسی پارٹیوں کو 'دہشت گرد' تنظیموں کے امیدواروں سے خطرہ

    پاکستان کے الیکشن میں روایتی پارٹیوں کو دہشت گرد گروپوں اورجہادی تنظیموں سے خطرہ محسوس  ہورہا ہے۔

    پاکستان کے الیکشن میں روایتی پارٹیوں کو دہشت گرد گروپوں اورجہادی تنظیموں سے خطرہ محسوس ہورہا ہے۔

    پاکستان کے الیکشن میں روایتی پارٹیوں کو دہشت گرد گروپوں اورجہادی تنظیموں سے خطرہ محسوس ہورہا ہے۔

    • Share this:
      پاکستان کی روایتی پارٹیاں جنہوں نے 25 جولائی کو ہونے والے الیکشن کے لئے بڑی تعداد میں امیدواروں کو میدان میں اتارا ہے۔ دہشت گردوں اورجہادی تنظیموں سے متعلقہ جماعتوں سے خطرہ محسوس کررہی ہیں۔

      الگ الگ فرقوں کی مذہبی جماعتوں کی سیاسی پارٹیاں متحدہ مجلس عمل (ایم ایم اے) نے قومی اسمبلی کے براہ راست منتخب علاقوں سے 192 امیدواروں کو اتارا ہے جبکہ شدت پسند مولانا خادم رضوی کی تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) نے اکیلے ہی 178 امیدواروں کو ٹکٹ دیا ہے۔

      میڈیا خبروں کے مطابق موجودہ سیاسی پارٹیاں شدت پسند گروپوں سے خطرہ محسوس کررہی ہیں۔ ایم ایم اے میں قاضی حسین احمد کی صدارت والی جماعت اسلامی، مولانا فضل الرحمان کی قیادت والی جمعیت علمائے اسلام فضل، مولانا شاہ احمد نورانی کی قیادت والی جمعیت علمائے پاکستان اورعلامہ ساجد نقوی کی صدارت والی تحریک جفاریہ جیسی روایتی مذہبی پارٹیاں شامل ہیں۔

      بیشترشدت پسند پارٹیوں نے گمنام سیاسی پارٹیوں سے اپنے امیدواراتارے ہیں۔ خبروں میں کہا جارہا ہے کہ شدت پسند تنظیم سپائے صحابہ پارٹی سے پاکستان راہ حق پارٹی ابھری ہے جبکہ حافظ سعید کی قیادت والی جماعت الدعوۃ کی سیاسی جماعت اللہ واکبر پارٹی کے طور پرسامنے آئی ہے۔ رضوی کی ٹی ایل پی بھی میدان میں ہے۔ انہوں نے ایم ایم اے اتحاد سے زیادہ امیدواراتارے ہیں۔

      پاکستانی اخبار ڈان کے مطابق "دہشت گرد امیدوار" والے اداریے میں کہا ہے کہ کئی انتخابی حلقوں میں شدت پسند دہشت گرد اورجہادی گروپ سے مضبوط تعلق رکھنے والے امیدواروں کو عام انتخاب لڑنے کی اجازت دی جارہی ہے۔ پریشان کرنے والی بات تو یہ ہے کہ جن اداروں کے پاس انہیں انتخابی سیاست میں آنے سے روکنے کی قانونی اورآئینی اختیارات ہیں، وہ ادھر ادھر دیکھ رہے ہیں۔

      جماعت الدعوۃ کا سینئرلیڈراورلشکرطیبہ کی مرکزی مشاورتی کمیٹی کا رکن قاری محمد شیخ لاہوری کی ایک پارلیمانی سیٹ سے انتخابی میدان میں ہے، وہ امریکہ کے دہشت گردوں کی فہرست میں شامل ہے۔  اہل سنت والجماعت کا سربراہ مولانا احمد لدھیانوی جھانگ سے آزاد امیدوارکے طورپرالیکشن لڑرہا ہے جبکہ اسی جماعت میں کراچی کا لیڈراورنگ زیب فاروقی راہ حق پارٹی سے قومی اسمبلی کے لئے میدان میں ہے۔

       
      First published: