உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مسعود اظہر کی گرفتاری کیلئے پاکستان نے افغانستان کو لکھا خط، آخر کیا ہے معاملہ؟

    مسعود اظہر  (فائل فوٹو)

    مسعود اظہر (فائل فوٹو)

    ہندوستانی سرکاری عہدیداروں نے سی این این نیوز 18 کو بتایا کہ یہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (FATF) کے مینڈیٹ کی تعمیل کرنے اور بین الحکومتی تنظیم کی گرے لسٹ سے نکلنے کی پاکستان کی کوشش ہوسکتی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ دوسری مرتبہ افغانستان کو خط لکھا گیا ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • inter, IndiaPakistanPakistan
    • Share this:
      میڈیا ذرائع کے مطابق پاکستان نے مولانا مسعود اظہر (Maulana Masood Azhar) کی گرفتاری کے لیے افغانستان کو خط لکھا ہے۔ مولانا مسعود اظہر جیش محمد (Jaish-e-Mohammed) کا سربراہ ہے۔ وہ اقوام متحدہ کا نامزد کردہ دہشت گرد ہے، جو کہ ہندوستان کو انتہائی مطلوب ہے۔ اعلیٰ ذرائع نے سی این این نیوز 18 کو بتایا کہ پاکستان کے دفتر خارجہ نے طالبان کے نام اپنے خط میں دعویٰ کیا ہے کہ مسعود اظہر ممکنہ طور پر افغانستان کے صوبہ ننگرہار میں چھپا ہوا ہے۔ ذرائع کے مطابق خط میں کہا گیا ہے کہ وہ ننگرہار اور کنڑ کے علاقوں میں ہو سکتا ہے، اس لیے اسے ڈھونڈا جائے، گرفتار کیا جائے اور ہمیں (ہندوستان کو) آگاہ کیا جائے۔

      ہندوستانی سرکاری عہدیداروں نے سی این این نیوز 18 کو بتایا کہ یہ فائنانشئل ایکشن ٹاسک فورس (FATF) کے مینڈیٹ کی تعمیل کرنے اور بین الحکومتی تنظیم کی گرے لسٹ سے نکلنے کی پاکستان کی کوشش ہوسکتی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ دوسری مرتبہ افغانستان کو خط لکھا گیا ہے۔ پہلی بار اس سال جنوری میں ایک خط لکھا گیا تھا جب پاکستان نے وزارتی سطح پر افغانستان کے ساتھ معاملہ اٹھایا تھا۔ دوسرا خط ایف اے ٹی ایف کے 28 اگست سے 3 ستمبر تک پاکستان کے آن سائٹ دورے سے کچھ پہلے لکھا ہے۔ پاکستان کو ایف اے ٹی ایف کے اکتوبر کے اجلاس میں گرے لسٹ سے نکالے جانے کی امید ہے لیکن اسے 34 نکاتی ٹاسک لسٹ کی تعمیل کرنی ہوگی۔

      ’’مسعود اظہر پاکستان میں نہیں‘‘

      ذرائع نے بتایا کہ ایف اے ٹی ایف ٹیم کو پاکستانی حکام نے بریفنگ دی ہے کہ مولانا مسعود اظہر پاکستان میں نہیں ہیں کیونکہ وہ کافی عرصہ پہلے افغانستان فرار ہو چکا ہے۔ پاکستان کے ساتھ کام کرنے والے ایک اہلکار نے سی این این نیوز 18 کو بتایا کہ ہندوستان میں اعلیٰ حکام نے اسے ساجد میر کی گرفتاری کے ڈرامے کا اعادہ قرار دیا۔ یہ ایک چشم کشا سازش ہے۔ پاکستان ہمیشہ اس سے انکار کرتا رہا ہے۔ ایک دوسرے افسر نے مزید کہا کہ مسعود کو ننگرہار میں تلاش کرنے کے بجائے بہاولپور اور راولپنڈی کے اپنے محفوظ گھروں میں تلاش کرنا چاہیے۔

      26/11 ممبئی حملوں کے کیس میں مطلوب ساجد میر کو پاکستان نے گزشتہ سال تک مردہ قرار دیا تھا۔ ایف اے ٹی ایف کی جانب سے پاکستان کی قسمت کے بارے میں فیصلہ کرنے سے پہلے ساجد کو اچانک دہشت گردی کے الزامات میں پایا گیا، گرفتار کیا گیا اور سزا سنائی گئی۔ جب کہ ہندوستان کا خیال ہے کہ افغانستان کی طرف موجودہ پیش رفت اسی اسکرپٹ کا ری پلے ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:


      ہندوستانی خفیہ ایجنسیوں کا خیال ہے کہ مسعود اظہر بہاولپور میں آئی ایس آئی کے ایک سیف ہاؤس میں رہ رہا ہے۔ راولپنڈی کے ایک ہسپتال میں ان کے اکثر دورے بھی ہندوستان کی طرف سے دستاویزی اور نقل کیے گئے ہیں۔ سیکورٹی تجزیہ کار سوشانت سرین نے سی این این نیوز 18 کو بتایا کہ اگر ایف اے ٹی ایف اس کے لیے گرے لسٹ جاری کرتا ہے تو یہ واضح ہو جائے گا کہ انہیں دہشت گردی سے کوئی مسئلہ نہیں ہے۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: