உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کیا جھوٹ تھا Imran Khan کا غیر ملکی سازش کے ہاتھ ہونے کا دعویٰ؟ پاکستانی آرمی نے بتایا پورا سچ

    کیا جھوٹ تھا Imran Khan کا غیر ملکی سازش کے ہاتھ ہونے کا دعویٰ؟

    کیا جھوٹ تھا Imran Khan کا غیر ملکی سازش کے ہاتھ ہونے کا دعویٰ؟

    Pakistan News, Imran Khan News: عمران خان نے اپوزیشن کے تحریک عدم اعتماد کی مخالفت میں اسلام آباد میں ایک بڑی ریلی کو خطاب کیا تھا اور اس میں انہوں نے الزام لگایا تھا کہ انہیں عہدے سے ہٹائے جانے کے پیچھے غیرملکی سازشی کی جارہی ہے۔ تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ سے پہلے انہوں نے ملک کو مخاطب کرتے ہوئے سیدھے طور پر تحریک عدم اعتماد کے لئے امریکہ کو ذمہ دار ٹھہرایا تھا۔

    • Share this:
      نئی دہلی: عمران خان (Imran Khan) کے الزامات کو لے کر پاکستان (Pakistan News) کی فوج نے جمعرات کو بڑا بیان دیا۔ پاکستان کی فوج نے سابق وزیر اعظم عمران خان کے اس الزامات کو از سر نو مسترد کردیا ہے، جس میں انہوں نے کہا تھا کہ انہیں وزیر اعظم عہدے سے ہٹانے کے لئے غیرملکی سازش کی جا رہی ہے۔ اپوزیشن کی تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ سے قبل عمران خان نے الزام لگایا تھا کہ ان کی حکومت کو گرانے کے لئے امریکہ نے سازش رچی تھی۔ عمران خان کے اس الزام کو اب فوج کی طرف سے خارج کردیا گیا ہے۔

      عمران خان نے جس خط کو لے کر سازش کی بات ہی تھی، اسے انہوں نے قومی سلامتی کمیٹی کے افسران کو بھی دکھایا تھا۔ اب خط کو لے کر سلامتی کمیٹی نے اس بات سے انکار کردیا ہے کہ خط سے متعلق سلامتی کمیٹی میں سازش جیسی کوئی بات کہی تھی۔ پاکستانی میڈیا ونگ انٹرسروسیز پبلک ریلیشنس کے جنرل ڈائریکٹر میجر جنرل بابر افتخار نے جمعرات کو کہا کہ گزشتہ ماہ پاکستان قومی سلامتی کمیٹی کی میٹنگ کے بعد جاری بیان میں سازش لفظ کا استعمال نہیں کیا گیا۔

      واضح رہے کہ عمران خان نے اپوزیشن کی تحریک عدم اعتماد کی مخالفت میں اسلام آباد میں ایک بڑی ریلی کو خطاب کیا تھا اور اس میں انہوں نے الزام لگایا تھا کہ انہیں عہدے سے ہٹائے جانے کے پیچھے بیرون ملک سے سازش کی جا رہی ہے۔ تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ سے قبل انہوں نے ملک کو خطاب کرتے ہوئے سیدھے طور پر تحریک عدم اعتماد کے لئے امریکہ کو ذمہ دار ٹھہرایا تھا۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      Exclusive: ’غیر ملکی سازش‘ کے مبینہ نوٹ کے ساتھ SC پہنچے عمران خان، جانئے آخر کیا ہے اس لیٹر میں

      عمران خان نے امریکہ پر الزام لگاتے ہوئے کہا تھا کہ واشنگٹن نے ان کی برخاستگی کی حمایت کی کیونکہ وہ امریکہ کی اجازت کے بغیر روس چلے گئے تھے۔ حالانکہ امریکہ نے عمران خان کے ان الزامات سے انکار کردیا تھا۔ عمران خان 24 فروری کو روسی صدر ولادیمیر پتن سے ملنے ماسکو پہنچے تھے اور اسی دن روس نے یوکرین کے خلاف جنگ چھیڑ دیا تھا۔ امریکہ پر عمران خان کے الزامات کے ترجمان جنرل بابر افتخار نے پوری طرح سے خارج کردیا ہے۔

      واضح رہے کہ پاکستان کی پارلیمنٹ قومی اسمبلی میں 10 اپریل بروز اتوار تحریک عدم اعتماد کے ذریعہ عمران خان کو پاکستان کے اقتدار سے ہٹا دیا گیا اور اب شہباز شریف ملک کے 23ویں وزیر اعظم ہیں۔ اس سے قبل عمران خان جب سال 2018 میں اقتدار میں آئے تھے تو اس بات کی بھی بحث جم کر شروع ہوئی تھی کہ انہیں اقتدار میں لانے میں فوج کا بڑا تعاون ہے۔ حالانکہ دونوں ہی اس بات سے انکار کرتے رہے ہیں۔ عمران خان کے الزامات کے بعد فوجی سربراہ جنرل قمر جاوید باجوا نے امریکہ سے اچھے تعلقات بنانے کی بات کہہ کر موضوع کو سنبھالنے کی بھی کوشش کی تھی۔

       
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: