உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Pakistan: مریم نواز کا بڑا الزام، کہا- حکومت بچانے کی ’بھیک‘ مانگ رہے تھے عمران خان

    مریم نواز کا بڑا الزام، کہا- حکومت بچانے کی ’بھیک‘ مانگ رہے تھے عمران خان

    مریم نواز کا بڑا الزام، کہا- حکومت بچانے کی ’بھیک‘ مانگ رہے تھے عمران خان

    پاکستان (Pakistan) میں برسراقتدار پی ایم ایل این کی نائب صدر مریم نواز نے الزام لگایا کہ بے دخل وزیر اعظم عمران خان (Imran Khan) اقتدار میں بنے رہنے کے لئے اتنے بیتاب تھے کہ انہوں نے اپنی حکومت کو بچانے کے لئے پاکستانی فوج (Pakistan Army) سے آخری منٹ تک ’بھیک‘ مانگی۔

    • Share this:
      لاہور: پاکستان (Pakistan) میں برسراقتدار پی ایم ایل این کی نائب صدر مریم نواز نے الزام لگایا کہ بے دخل وزیر اعظم عمران خان (Imran Khan) اقتدار میں بنے رہنے کے لئے اتنے بیتاب تھے کہ انہوں نے اپنی حکومت کو بچانے کے لئے پاکستانی فوج (Pakistan Army) سے آخری منٹ تک ’بھیک‘ مانگی۔ پاکستان کے 75 سالوں کی تاریخ میں سے نصف سے زیادہ وقت تک ملک پر فوج کا اقتدار رہا ہے، جہاں کبھی بھی تختہ پلٹ ہونے کا خدشہ بنا رہتا ہے۔ ساتھ ہی فوج کی سیکورٹی اور غیر ملکی پالیسی کے معاملوں میں بھی خاصا دخل رہا ہے۔

      حالانکہ فوج نے حال میں شہباز شریف اور عمران خان کے درمیان ہوئے سیاسی جدوجہد سے یہ کہتے ہوئے خود کو دور کرلیا تھا کہ اس کا سیاست سے کوئی لینا دینا نہیں ہیں۔ مریم نواز نے منگل کی دیر رات لاہور میں کارکنان کے اجلاس میں کہا، ’عمران خان اتنے مایوس تھے کہ انہوں نے آخری لمحات تک اپنی حکومت کو بچانے کے لئے فوج سے بھیک مانگی تھی۔ یہاں تک کہ انہوں نے اپنے خلاف لائی گئی تحریک عدم اعتماد کی تجویز کے پیش نظر سابق صدر اور پی پی پی کے شریک صدر آصف علی زرداری تک سے مدد کی اپیل کی تھی‘۔

      واضح رہے کہ عمران خان کو 10 اپریل کو قومی اسمبلی میں اپوزیشن کے ذریعہ لائی گئی تحریک عدم اعتماد کی تجویز سے وزیر اعظم عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا اور وہ پارلیمنٹ کے ذریعہ بے دخل کئے گئے پاکستان کے پہلے وزیر اعظم بن گئے۔

      مریم نواز کو ان کے والد اور تین بار کے وزیر اعظم رہے نواز شریف کے ذریعہ ریلیاں کرنے کا کام سونپا گیا ہے۔ وہ خاص کر پنجاب میں عمران خان کے عوامی پاور شو کا مقابلہ کرنے کے لئے کئی ریلیاں نکالی جا رہی ہیں۔ نواز شریف کے خلاف عمران خان کی قیادت والی گزشتہ پاکستان تحریک انصاف حکومت کے ذریعہ بدعنوانی کے کئی معاملے شروع کئے گئے تھے۔ نومبر 2019 میں لاہور ہائی کورٹ کے ذریعہ نواز شریف کو بیرون ملک جانے کی اجازت دینے کے بعد انہیں لندن کے لئے روانہ کیا گیا تھا۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: