உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان کے پاس US Embassy کو تنخواہ دینے کیلئے فنڈس نہیں، اسٹاف نے چھوڑی نوکری

    پاکستانی سفارتخانہ میں پانچ ملازمین ایسے ہیں جنہیں چار ماہ سے تنخواہ نہیں مل سکی۔

    پاکستانی سفارتخانہ میں پانچ ملازمین ایسے ہیں جنہیں چار ماہ سے تنخواہ نہیں مل سکی۔

    پاکستانی سفارتخانہ میں پانچ ملازمین ایسے ہیں جنہیں چار ماہ سے تنخواہ نہیں مل سکی۔ انہیں آخری بار جولائی میں تنخواہ دی گئی تھی۔ اس کے بعد اگست سے نومبر تک کوئی ادائیگی نہیں کی گئی۔ یہ وہ عملہ ہیں جنہیں امریکہ میں رکھا گیا تھا۔ یہ لوگ تقریباً 10 سال سے سفارت خانے میں کام کر رہے تھے۔

    • Share this:
      اسلام آباد: پاکستان (Pakistan) کی مالی حالت بد سے بدتر ہوتی جارہی ہے۔ اس وجہ سے بین الاقوامی سطح پر ان کی توہین ہو رہی ہے۔ حال ہی میں سربیا میں پاکستانی سفارت خانے (Pakistan Embassy Serbia) نے عمران خان (Imran Khan) سے تنخواہ نہ ملنے کی شکایت کی تھی۔ اب خبر ہے کہ امریکہ میں موجود پاکستانی سفارتخانے کے کچھ عملے کو چار ماہ سے تنخواہ نہیں ملی۔ اس سے ناراض ہو کر کچھ ملازمین نے کام چھوڑ دیا۔ قطر سے بھی ایسی ہی باتیں سامنے آ رہی ہیں، حالانکہ اس کی تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔

      پاکستان کے اخبار ’دی نیوز‘ کی ایک رپورٹ کے مطابق امریکہ میں پاکستانی سفارت خانے کے پاس موجود فنڈز ختم ہو چکے ہیں۔ اس کے کئی ثبوت بھی سامنے ہیں۔ اب سفیر کسی نہ کسی طرح صورتحال کو سنبھالنے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن وہ کب تک ایسا کر پائیں گے۔ نہیں کہا جا سکتا۔ پاکستانی سفارتخانہ میں پانچ ملازمین ایسے ہیں جنہیں چار ماہ سے تنخواہ نہیں مل سکی۔ انہیں آخری بار جولائی میں تنخواہ دی گئی تھی۔ اس کے بعد اگست سے نومبر تک کوئی ادائیگی نہیں کی گئی۔ یہ وہ عملہ ہیں جنہیں امریکہ میں رکھا گیا تھا۔ یہ لوگ تقریباً 10 سال سے سفارت خانے میں کام کر رہے تھے۔

      معلومات کے مطابق پانچ ملازمین میں سے کچھ نے استعفیٰ دے دیا ہے تاہم سفارت خانہ یا دیگر لوگ اس بارے میں بات کرنے سے گریز کر رہے ہیں۔ انہیں سالانہ کانٹریکٹ پر نوکریاں دی گئیں۔ ہر ایک کی تنخواہ تقریباً 2500 ہزار ڈالر ماہانہ ہے۔

      سربیا میں بھی یہی ہوا تھا
      حال ہی میں پاکستان میں اس وقت ہلچل مچ گئی جب سربیا میں پاکستانی سفارتخانے (Pakistan Embassy Serbia) کے آفیشل ٹوئٹر ہینڈل سے ٹویٹ کرکے مہنگائی اور تین ماہ سے تنخواہ نہیں ملنے کی شکایت کی گئی۔ اس ٹویٹ میں وزیراعظم عمران خان (Imran Khan) کو بھی ٹیگ کیا گیا ہے۔ اس ٹویٹ کے نیچے ایک اور ٹویٹ کیا گیا ہے جس میں لکھا ہے کہ اس کے علاوہ اور کوئی آپشن نہیں تھا۔

      نیوز ایجنسی اے این آئی نے سربیا میں پاکستانی سفارت خانے (Pakistan Embassy Serbia) کا ٹویٹ شیئر کیا ہے جس میں حکام نے عمران خان سے سوال پوچھا ہے۔ اس ٹویٹ میں سفارت خانے میں تعینات اہلکاروں نے عمران سے سوال کیا ہے کہ 'پاکستان میں مہنگائی اب تک کے تمام ریکارڈ پیچھے چھوڑ رہی ہے۔ وزیراعظم عمران خان آپ کب تک ہم سے حکومتی افسران کے خاموش رہنے کی توقع رکھتے ہیں؟ تین ماہ سے تنخواہ نہیں ملی پھر ہم بھی کام کر رہے ہیں۔ ہمارے بچوں کو اسکولوں کی فیس کی عدم ادائیگی کی وجہ سے اسکولوں سے نکال دیا گیا ہے۔

      پاکستان میں مہنگائی 70 سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی
      پاکستان میں مہنگائی کی وجہ سے عوام بہت پریشان ہیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ پاکستان میں مہنگائی 70 سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔ 'دی نیوز' کی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں اشیائے ضروریات کھانے کی قیمیتیں دوگنی ہو گئی ہیں۔ گھی، تیل، آٹا اور چکن کی قیمتوں میں زبردست اضافہ ہوا ہے۔
      قومی، بین الااقوامی، جموں و کشمیر کی تازہ ترین خبروں کے علاوہ تعلیم و روزگار اور بزنس کی خبروں کے لیے نیوز18 اردو کو ٹویٹر اور فیس بک پر فالو کریں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: