உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Pakistan in Grey List:ابھی FATFکی’گرے لسٹ‘ میں ہی رہے گا پاکستان، اب آن سائٹ تصدیق کے بعد ہی راحت ممکن

    FATF سے پاکستان کو پھر لگا زور کا جھٹکا۔

    FATF سے پاکستان کو پھر لگا زور کا جھٹکا۔

    Pakistan in Grey List: ایک پریس کانفرنس میں ایف اے ٹی ایف کی جانب سے بتایا گیا کہ ٹاسک فورس کو پتہ چلا ہے کہ اس نے پاکستان کو دیے گئے دو ایکشن پلان کامیابی سے مکمل کر لیے ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: دہشت گرد تنظیموں اور دہشت گردوں کی بین الاقوامی فنڈنگ ​​روکنے کے لیے قائم کیے گئے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (FATF) کی واچ لسٹ (گرے لسٹ) میں پاکستان ابھی بھی رہے گا۔ حکومت پاکستان کی جانب سے دہشت گردی کی فنڈنگ ​​روکنے کے لیے گزشتہ چار سالوں میں کیے گئے اقدامات کا ایف ٹی پی ایف حکام جائزہ لیں گے اور اگر مطمئن ہو گئے تو اس سال اکتوبر میں اسے گرے لسٹ سے نکالنے کا فیصلہ کیا جا سکتا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      پاکستان میں 233 روپے فی لیٹر مل رہا ہے Petrol، ایک دن میں 24 روپے بڑھے، یہ ہے بڑی وجہ

      اکتوبر میں حتمی فیصلہ ممکن
      پیرس میں ایف اے ٹی ایف کے جائزہ اجلاس میں پاکستان کے دہشت گردوں کی فنڈنگ ​​روکنے کے لیے کیے گئے اقدامات کو سراہا گیا ہے۔ دوسری جانب پاکستان کی جانب سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ اسے ایف اے ٹی ایف کی فہرست سے باہر رکھا گیا ہے اور اب اکتوبر میں ٹاسک فورس کی جانب سے اس کا باضابطہ اعلان ہونا باقی ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:
      WTO: ورلڈٹریڈ آرگنائزیشن کے اجلاس میں ہندوستان کی گونچ! کئی ممالک نےکی تائید، جانیےتفصیلات

      یہ بھی پڑھیں:
      پاکستان میں الگ اسلامی ملک بنانے کی تیاری میں TTP، گھبرائی شہباز حکومت نےاٹھایا یہ بڑا قدم

      ٹھوس کارروائی سے متعلق اٹھانے تھے 34 قدم
      جمعے کی رات دیر گئے ایک پریس کانفرنس میں ایف اے ٹی ایف کی جانب سے بتایا گیا کہ ٹاسک فورس کو پتہ چلا ہے کہ اس نے پاکستان کو دیے گئے دو ایکشن پلان کامیابی سے مکمل کر لیے ہیں۔ اس کے تحت پاکستان کو دہشت گردوں کی فنڈنگ ​​اور منی لانڈرنگ روکنے، انسداد دہشت گردی کے قانون کو مضبوط بنانے، کالعدم دہشت گردوں کے خلاف ٹھوس کارروائی کرنے کے لیے 34 اقدامات کرنے تھے۔ گزشتہ سال ستمبر میں ہونے والے ایف اے ٹی ایف کے اجلاس تک پاکستان نے 32 مطالبات پورے کیے تھے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: