உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان: Imran Khan حکومت کا آخری دن قریب! اہم اتحادی بلوچ لیڈر کا کابینہ سے استعفیٰ، اپوزیشن سے ملایا ہاتھ

    پاکستان: عمران خان حکومت کے اہم اتحادی بلوچ لیڈر کا کابینہ سے استعفی

    پاکستان: عمران خان حکومت کے اہم اتحادی بلوچ لیڈر کا کابینہ سے استعفی

    Pak Imran govt in trouble: پاکستان میں عمران خان حکومت (Pakistan Imran Khan) کی مشکلات میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ ان کا حکومت میں رہنا اب بے حد مشکل ہوتا جا رہا ہے۔ آج عمران خان کی پارٹی پاکستان تحریک انصاف (PTI) کی اہم اتحادی پارٹی شاہ زین بگٹی (Shahzain Bugti) نے کابینہ سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوا ہے کہ عمران خان کے پاس اب قومی اسمبلی میں اراکین کی تعداد مزید کم ہوگئی ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: پاکستان میں عمران خان (Pakistan Imran Khan) حکومت کا آخری دن قریب آچکا ہے۔ کل یعنی 28 مارچ کو قومی اسمبلی میں عمران خان حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد (No confidence motion) لائی گئی ہے اور آج عمران حکومت میں اہم اتحادی جمہوری وطن پارٹی (Jamoori Watan Party) کے لیڈر شاہ زین بگٹی (Shahzain Bugti) نے کابینہ سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ اس کا مطالب یہ ہوا ہے کہ عمران خان کے پاس اب قومی اسمبلی میں اراکین کی تعداد اور کم ہوگئی ہے۔ شاہ زین بگٹی پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کے بلوچستان پر پُرامن ماحول اور صلح معاملات کے مشیر تھے۔ انہیں وزیر کا درجہ حاصل تھا۔

      سب سے بڑی بات یہ ہے کہ شاہ زین بگٹی (Shahzain Bugti) نے اپوزیشن خیمے سے ہاتھ ملا لیا ہے۔ بگٹی کی پارٹی اب اپوزیشن کے ذریعہ بنائے گئے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کا حصہ ہوگی۔ شاہ زین بگتی مرحول اکبر بگٹی کے رشتہ دار ہیں۔ اکبر بگٹی بلوچستان آندولن کے اہم لیڈر تھے، جنہیں پرویز مشرف کی مدت اقتدار میں 2006 میں پاکستانی فوج نے مار گرایا تھا۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      عمران خان کے وزیر کا عجیب بیان- اگر اسلام میں حرام نہیں ہوتا خود کش حملہ تو تمام باغی اراکین پارلیمنٹ کو اڑا دیتا

      یہ بھی پڑھیں۔

      پاکستان: Imran Khan حکومت کے 50 وزیر لاپتہ یا قید؟ سیاسی بحران کے درمیان نظر نہیں آئے یہ وزرا

      اشرف بگٹی کے رشتہ دار ہیں شاہ زین

      شاہ زین بگتی کا استعفیٰ ایسے وقت میں آیا ہے، جب عمران خان آج اسلام آباد میں ریلی کرنے والے ہیں۔ مانا جا رہا ہے کہ اسلام آباد میں ریلی کرکے عمران خان عوام پر اپنی طاقت کا مظاہرہ کرنا چاہتے ہیں۔ اس ریلی میں لاکھوں لوگوں کے حصہ لینے کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے۔ عمران خان 2018 میں پاکستان کے وزیر اعظم بنے تھے۔ ان کی پارٹی انتخابات میں نیا پاکستان کے وعدے کے ساتھ سب سے بڑی پارٹی بن کر ابھری تھی۔ تاہم اقتصادی محاذ پر ناکام رہنے کے سبب پاکستان کی اپوزیشن جماعتیں ان پر حاوی ہوچکی ہیں۔

      عمران خان حکومت کے 50 وزراء لاپتہ!

      پاکستانی میڈیا (Pakistan Media) کی کئی رپورٹس میں دعویٰ کیا جارہا ہے کہ عدم اعتماد کی تحریک (No Confidence Motion) پر ہونے والی ووٹنگ کے بعد ان کی حکومت کا گرنا طے ہے۔ اس درمیان خبر آرہی ہے کہ برسراقتدار پاکستان تحریک انصاف (PTI) کے کم از کم 50 وزیر لاپتہ ہوگئے ہیں، جو کہ لوگوں کے درمیان نظر نہیں آرہے ہیں۔ پاکستانی اخبار، ’دی ایکسپریس ٹریبیون‘ کی رپورٹ کے مطابق، 50 سے زیادہ وفاقی اور صوبائی وزراء کو عوامی مقام پر نہیں دیکھا گیا ہے۔ اس اخبار نے ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ لاپتہ وزراء میں سے 25 وفاقی اور صوبائی مشیر اور خصوصی معاون ہیں، جبکہ ان میں سے 4 ریاست کے وزیر ہیں، 4 مشیر ہیں اور 19 خصوصی معاون ہیں۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: