உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مشکل میں عمران حکومت! Pakistan کے پاس بچا ہے صرف 5 دن کا تیل، بینکوں نے بھی دیا بڑا جھٹکا

    Pakistan Economic Crisis: پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کے روز اپنے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کرنے پر اپوزیشن کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وہ 'آلو، ٹماٹر' کی قیمتوں کو کنٹرول کرنے کے لیے سیاست میں نہیں آئے۔

    Pakistan Economic Crisis: پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کے روز اپنے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کرنے پر اپوزیشن کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وہ 'آلو، ٹماٹر' کی قیمتوں کو کنٹرول کرنے کے لیے سیاست میں نہیں آئے۔

    Pakistan Economic Crisis: پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کے روز اپنے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کرنے پر اپوزیشن کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وہ 'آلو، ٹماٹر' کی قیمتوں کو کنٹرول کرنے کے لیے سیاست میں نہیں آئے۔

    • Share this:
      اسلام آباد۔ مالیاتی بحران کا شکار پاکستان (Pakistan) کے سامنے ایک اور بڑا مسئلہ کھڑا ہو گیا ہے۔ روس اور یوکرین کے درمیان روس یوکرین جنگ Russia-Ukraine War) کے اثرات اب عمران خان (Imran Khan) حکومت پر بھی پڑنے لگے ہیں۔ روس اور یوکرین کی جنگ کے باعث بین الاقوامی منڈی میں تیل کی قیمتوں میں اضافے کے باعث پاکستان کو پیٹرولیم مصنوعات کی قلت کا سامنا ہے۔ اس کے پاس ڈیزل کا صرف پانچ دن کا اسٹاک بچا ہے۔

      ایکسپریس ٹریبیون اخبار کی رپورٹ کے مطابق پاکستانی بینکوں نے آئل کمپنیوں کو بھی ہائی رسک کیٹیگری میں رکھا ہے اور قرض دینے سے انکار کردیا ہے۔ ڈیزل کے ذخیرے میں کمی سے پاکستان کی عمران حکومت بھی مشکل میں پڑ گئی ہے۔ ایک طرف اپوزیشن متحرک ہے تو دوسری طرف ملک میں ڈیزل کا ذخیرہ کم ہونے سے مہنگائی میں مزید اضافے کا امکان ہے۔

      کنزیومر پرائس انڈیکس (سی پی آئی) میں ماپا جانے والی پاکستان کی عام افراط زر 24 ماہ کی بلند ترین سطح 13 فیصد پر ہے اور تقریباً تمام اشیاء کی قیمتیں بڑھ رہی ہیں۔ 'ڈان' اخبار کے مطابق، جنوری 2020 کے بعد یہ سب سے زیادہ CPI افراط زر ہے، جب یہ 14.6 فیصد تھی۔

      پاکستانی PM کی کرسی پر عمران خان بس کچھ ہی دنوں کے مہمان! اب Pakistan Army نے بھی دیا الٹی میٹم

      پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کے روز اپنے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کرنے پر اپوزیشن کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وہ 'آلو، ٹماٹر' کی قیمتوں کو کنٹرول کرنے کے لیے سیاست میں نہیں آئے۔ عمران  خان نے صوبہ پنجاب کے حافظ آباد میں ایک سیاسی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک ان عناصر کے خلاف کھڑا ہو گا جو "پیسے کی طاقت کے ذریعے" حکومت گرانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

      غور طلب ہے کہ پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان (Pakistan prime minister Imran Khan) کے لیے پریشانی بدستور بڑھتی ہی جا رہی ہے کیونکہ ان کے 24 قانون سازوں نے تحریک عدم اعتماد میں خان کے خلاف ووٹ دے کر حکمران پاکستان تحریک انصاف (PTI) کی حکومت کو ختم کرنے کی کھلی دھمکی دی ہے۔ توقع ہے کہ یہ تحریک، پاکستان کی قومی اسمبلی میں اس ماہ کے آخر میں پیش کی جائے گی۔

      نیوز ایجنسی جیونیوز سے بات کرتے ہوئے ناراض رکن قومی اسمبلی راجہ ریاض نے وزیراعظم عمران خان سے کہا کہ وہ پی ٹی آئی کے ان ارکان کے خلاف کارروائی نہ کریں جو ان کے خلاف ووٹ دینے والے ہیں۔ اس پیش رفت سے واقف لوگوں نے بتایا کہ راجہ ریاض، نواب شیر وسیر، رانا قاسم نون، غفار وٹو، نور عالم خان، ریاض مزاری، باسط بخاری، خواجہ شیراز، احمد حسن ڈیہڑ، نزہت پٹھان، رمیش کمار اور وجیہہ قمر اس وقت سندھ ہاؤس کے اندر مقیم ہیں۔

      (ایجنسی ان پٹ)

       
      Published by:Sana Naeem
      First published: